Ik Dasht Be Amma Ka Safar Hai Chalay Chalo

اک دشت بے اماں کا سفر ہے چلے چلو

اک دشت بے اماں کا سفر ہے چلے چلو

رکنے میں جان و دل کا ضرر ہے چلے چلو

حکام و سارقین کی گو رہگزر ہے گھر

پھر بھی برائے بیت تو در ہے چلے چلو

مسجد ہو مدرسہ ہو کہ مجلس کہ مے کدہ

محفوظ شر سے کچھ ہے تو گھر ہے چلے چلو

ظلمت ہے یاں بھی واں بھی اندھیرے ہی ہوں تو کیا

نور اک ورائے حد نظر ہے چلے چلو

اترا کنار بحر عطش ایک قافلہ

ختم اس پہ تشنگی کا سفر ہے چلے چلو

سر تک پہنچ نہ جائے کوئی تیز گام لہر

یاں خوں کی موج تا بہ کمر ہے چلے چلو

جاں کے زیاں کا ڈر ہے طلب میں اگر تو ہو

ترک طلب میں بھی تو خطر ہے چلے چلو

وحید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1382) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of WAHEED AKHTAR, Ik Dasht Be Amma Ka Safar Hai Chalay Chalo in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 31 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of WAHEED AKHTAR.