Be Aawaz Thay Ansoo Is Ke

بے آواز تھے آنسو اس کے

بے آواز تھے آنسو اس کے

چھوٹے چھوٹے پیر تھے اس کے

تن جیسے روئی کا گالا

رنگ تھا کالا

ندی کنارے تک پیروں کے

سارے نشان سلامت تھے

پار ندی کے کچھ بھی نہیں تھا

پار ندی کے کچھ بھی نہیں ہے

ساری راہیں ندیا کے اندر جاتی ہیں

اور پھر وہیں کی ہو جاتی ہیں

چھوٹے چھوٹے پیر برہنہ ریت کے اوپر پھول کھلا کر

ندی کنارے تک جاتے ہیں

اور پھر پار کہاں جاتے ہیں

ہر بچے کو

اڑتی تتلی سرگوشی میں بتلاتی ہے

ماں تیری ندیا کے اندر

دودھ کا اک مشکیزہ لے کر

تیرا رستہ دیکھ رہی ہے

کون بتائے ان بچوں کو

ماں ندیا کے اندر کب ہے

ماں تو خود اک تیز ندی ہے

ماں اک دودھ بھری ندی ہے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(495) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Be Aawaz Thay Ansoo Is Ke in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.