Deewar Girya

دیوار گریہ

عجب جادو بھری آنکھیں تھیں اس کی

وہ جب پلکیں اٹھا کر اک نظر تکتی تو آنکھوں کی

سیہ جھیلوں میں

جیسے مچھلیوں کو آگ لگ جاتی

ہزاروں سرخ ڈورے تلملا کر جست بھرتے

آب غم کی قید سے باہر نکلنے کے لیے

سو سو جتن کرتے

مگر مجبور تھے

چاروں طرف آنسو کے گنبد تھے

نمی کے بلبلے تھے

اور اک دیوار گریہ

جو ازل سے تا ابد پھیلی ہوئی تھی

عجب جادو بھری آنکھیں تھیں اس کی

بظاہر آنے والے کو نہ آنے کے لئے کہتی

بباطن چاہتی دیوار کو وہ توڑ کر اس تک پہنچ جائیں

کھڑا ہوں میں پس دیوار گریہ

نمی کے بلبلوں کو اس کی پلکوں پر لرزتے جھلملاتے

دیکھتا ہوں انگلیوں سے چھو بھی سکتا ہوں

مگر دیوار گریہ کو

افق سے تا افق پھیلی ہوئی

شیشے کی اس شفاف چادر کو کبھی اب تک تو کوئی توڑ کر آگے نہیں آیا

میں اک آنسو بھرے لمحے کی سلوٹ

میں کیسے پار کر سکتا ہوں اس کو

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(347) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Deewar Girya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.