Dhar Si Taaza Lahoo Ki Shabnam Afshani Main Hai

دھار سی تازہ لہو کی شبنم افشانی میں ہے

دھار سی تازہ لہو کی شبنم افشانی میں ہے

صبح اک بھیگی ہوئی پلکوں کی تابانی میں ہے

آنکھ ہے لبریز شاید رو پڑے گا تو ابھی

جیسے ذلت کا مداوا آنکھ کے پانی میں ہے

میں نہیں ہارا تو میرے حوصلے کی داد دے

اک نیا عزم سفر اس خستہ سامانی میں ہے

بے ثمر بے رنگ موسم برف کی صورت سفید

اور دل امڈے ہوئے رنگوں کی طغیانی میں ہے

آگ ہے سینے میں تیرے موجزن تو یاد رکھ

شمع سی روشن اندھیرے گھر کی ویرانی میں ہے

ان گنت رنگوں کے پر بکھرے پڑے ہیں ہر طرف

وقت کا گھائل پرندہ پھر سے جولانی میں ہے

کس گھنے جنگل میں جا کر اب چھپیں بستی کے لوگ

آنکھ سی ابھری ہوئی سورج کی پیشانی میں ہے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(356) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Dhar Si Taaza Lahoo Ki Shabnam Afshani Main Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.