Ik Peepal Ke Neechay Main Ne Apni Khat Bichai

اک پیپل کے نیچے میں نے اپنی کھاٹ بچھائی

اک پیپل کے نیچے میں نے اپنی کھاٹ بچھائی

لیٹ گیا میں کھاٹ پہ لیکن نیند نہ مجھ کو آئی

آہیں بھرتے کروٹیں لیتے ساری عمر گنوائی

پیپل کے پتوں کو گنتے کرتے ان پر غور

پیپل کی شاخوں کو تکتے بیت گیا اک دور

پیپل کی ہر چیز پرانی البیلا ہر طور

چلے ہوا تو ڈالی ڈالی لچک لچک بل کھائے

رکے ہوا تو سادھو بن کر دھیان کا دیپ جلائے

جھکڑ کے ہر وار پہ ڈولے چیخ چیخ رہ جائے

پیپل کی شاخوں پر بیٹھے کچھ پنچھی سستائیں

باہر سے کچھ آنے والے اک کہرام مچائیں

گائیں گیت انوکھے مل کر ناچیں اور نچائیں

پیپل کیا ہے جوگی کا بے درسا اک استھان

جھونکے پتے پنچھی انساں سب اس کے مہمان

کھاٹ پہ لپٹا سوچ رہا ہوں میں مورکھ نادان

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(417) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Ik Peepal Ke Neechay Main Ne Apni Khat Bichai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.