Is Ke Dushman

اس کے دشمن

سحر ہوئی تو کسی نے اٹھ کر

لہو میں تر ایک سرخ بوٹی

بڑی کراہت سے

آسماں کے فراخ آنگن میں پھینک دی اور

طویل متلی کی جان لیوا سی کیفیت سے نجات پائی

مگر فلک کے فراخ آنگن میں

بادلوں کے سفید سگ اس کے منتظر تھے

جھپٹ پڑے اس لہو میں تر دل کے لوتھڑے پر

جھپٹ پڑے ایک دوسرے پر

زمین کے لوگوں نے دیر تک یہ لڑائی دیکھی

سفید کتوں کے سرخ جبڑے

لہو میں تر ایک لال ٹکڑا دریدہ سورج

حریص گراتے بادلوں کا طویل گہرا مہیب دکھڑا

مری زمیں بھی تو گوشت کا لوتھڑا تھی جس کو

کسی نے اندھے خلا میں پھینکا

مگر نہ کوئی بھی اس پہ جھپٹا

تب اس کے اندر سے آئے باہر

اسی کے دشمن

اسی کی بو پر

ہزاروں خونخوار تند کتے

حریص جبڑے

اور اب دریدہ زمین ساری

ٹپکتے گرتے لہو کے قطروں میں رس رہی ہے

خود اپنے خونخوار تند بچوں کے تیز جبڑوں میں پس رہی ہے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(653) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Is Ke Dushman in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.