Mare Sans Ka Silsila

مری سانس کا سلسلہ

مری سانس کا سلسلہ

ایسے ٹوٹے کہ اک مست جھونکے کے مانند گرتی لڑھکتی ہوئی عمر میری

ہری لانبی مخمل سی خوشبو بھری گھاس میں

اپنے ننگے بدن کو اتارے

نہ آنسو گرائے نہ دامن پسارے

فقط ہاتھ کے الوداعی اشارے سے

اپنے تعاقب میں آتے پرندوں کو رخصت کرے

اور خود گھاس کی جھیل میں ڈوب جائے

مری سانس کا سلسلہ

یوں نہ ٹوٹے کہ اک تند جھونکے کے مانند اڑتی ہوئی عمر میری

کسی بند اجڑے ہوئے شہر میں دفعتاً خود کو پائے

بھیانک خموشی کا اک ڈولتا قہقہہ

اس کی رگ رگ میں اترے تو وہ بوکھلائے

قطاروں میں لیٹی ہوئی مردہ گلیوں میں بھٹکے

مکانوں میں اترے منڈیروں پہ آئے

سیہ چھوٹی اینٹوں کی فرسودہ دیوار کو اپنی پوروں سے چھو کر

کوئی در ڈھونڈے کوئی راہ مانگے

اچانک کسی سرد کھمبے کی بے نور آنکھوں سے جھانکے

بڑے کرب سے گڑگڑائے

خدارا کوئی مجھ کو باہر نکلنے کا رستہ بتائے

خدارا کوئی مجھ کو باہر نکلنے کا رستہ بتائے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(373) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Mare Sans Ka Silsila in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.