Sehar Ne A Kar Mujhe Sulaya To Main Ne Jana

سحر نے آ کر مجھے سلایا تو میں نے جانا

سحر نے آ کر مجھے سلایا تو میں نے جانا

پھر ایک سپنا مجھے دکھایا تو میں نے جانا

بجز ہوا اب رکے گا کوئی نہ پاس میرے

اندھیری شب میں دیا بجھایا تو میں نے جانا

گیا یہ کہہ کر کہ ایک شب کی ہے بات ساری

مگر وہ جب لوٹ کر نہ آیا تو میں نے جانا

میں ایک تنکا رکا کھڑا تھا ندی کنارے

ندی نے بہنا مجھے سکھایا تو میں نے جانا

سیاہ بادل میں برق کوندی تو سب نے دیکھا

تری ہنسی نے مجھے رلایا تو میں نے جانا

میں اوڑھ کر خود کو سو گیا تھا کہ بے خطر تھا

کوئی پرندہ جو پھڑپھڑایا تو میں نے جانا

مرے ہی سینے میں سخت پتھر سی شے ہے کوئی

جو آج تو نے مجھے بتایا تو میں نے جانا

میں تیری نظروں سے گر چکا تھا مگر جو تو نے

مری نظر سے مجھے گرایا تو میں نے جانا

ہوا میں شامل تھی تشنگی اس کے تن بدن کی

ہوا نے میرا بدن جلایا تو میں نے جانا

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1200) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Sehar Ne A Kar Mujhe Sulaya To Main Ne Jana in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.