Thi Neend Meri Magar Is Main Khawab Is Ka Tha

تھی نیند میری مگر اس میں خواب اس کا تھا

تھی نیند میری مگر اس میں خواب اس کا تھا

بدن مرا تھا بدن میں عذاب اس کا تھا

سفینے چند خوشی کے ضرور اپنے تھے

مگر وہ سیل غم بے حساب اس کا تھا

دئیے بجھے تو ہوا کو کیا گیا بد نام

قصور ہم نے کیا احتساب اس کا تھا

یہ کس حساب سے کی تو نے روشنی تقسیم

ستارے مجھ کو ملے ماہتاب اس کا تھا

فلک پہ کرچیاں آنکھوں میں موتیا آنسو

جو ریزہ ریزہ ہوا آفتاب اس کا تھا

مری ذرا سی چمک کو کڑک نے ٹوک دیا

سوال تجھ سے کیا تھا جواب اس کا تھا

کھلی کتاب تھی پھولوں بھری زمیں میری

کتاب میری تھی رنگ کتاب اس کا تھا

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2516) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Thi Neend Meri Magar Is Main Khawab Is Ka Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.