Umer Ki Is Nao Ka Chalna Bhi Kya Rukna Bhi Kya

عمر کی اس ناؤ کا چلنا بھی کیا رکنا بھی کیا

عمر کی اس ناؤ کا چلنا بھی کیا رکنا بھی کیا

کرمک شب ہوں مرا جلنا بھی کیا بجھنا بھی کیا

اک نظر اس چشم تر کا میری جانب دیکھنا

آبشار نور کا پھر خاک پر گرنا بھی کیا

زخم کا لگنا ہمیں درکار تھا سو اس کے بعد

زخم کا رسنا بھی کیا اور زخم کا بھرنا بھی کیا

تیرے گھر تک آ چکی ہے دور کے جنگل کی آگ

اب ترا اس آگ سے ڈرنا بھی کیا لڑنا بھی کیا

در دریچے وا مگر بازار گلیاں مہر بند

ایسے ظالم شہر میں جینا بھی کیا مرنا بھی کیا

تجھ سے اے سنگ صدا اس ریزہ ریزہ دور میں

اک ذرا سے دل کی خاطر دوستی کرنا بھی کیا

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1201) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Umer Ki Is Nao Ka Chalna Bhi Kya Rukna Bhi Kya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.