Wazir Agha Poetry, Wazir Agha Shayari

وزیر آغا - Wazir Agha

2021 سرگودھا

مشہور شاعر وزیر آغا کی غزل شاعری ۔ وزیر آغا کی غزلیں

خود سے ہوا جدا تو ملا مرتبہ تجھے

وزیر آغا

کس کس سے نہ وہ لپٹ رہا تھا

وزیر آغا

لازم کہاں کہ سارا جہاں خوش لباس ہو

وزیر آغا

گل نے خوشبو کو تج دیا نہ رہا

وزیر آغا

اس گریۂ پیہم کی اذیت سے بچا دے

وزیر آغا

جبین سنگ پہ لکھا مرا فسانہ گیا

وزیر آغا

دھوپ کے ساتھ گیا ساتھ نبھانے والا

وزیر آغا

دن ڈھل چکا تھا اور پرندہ سفر میں تھا

وزیر آغا

دھار سی تازہ لہو کی شبنم افشانی میں ہے

وزیر آغا

بے صدا دم بخود فضا سے ڈر

وزیر آغا

بے زباں کلیوں کا دل میلا کیا

وزیر آغا

چلو مانا ہمیں بے کارواں ہیں

وزیر آغا

آسماں پر ابر پارے کا سفر میرے لیے

وزیر آغا

بادل برس کے کھل گیا رت مہرباں ہوئی

وزیر آغا

بادل چھٹے تو رات کا ہر زخم وا ہوا

وزیر آغا

کس کس سے نہ وہ لپٹ رہا تھا

وزیر آغا

عمر کی اس ناؤ کا چلنا بھی کیا رکنا بھی کیا

وزیر آغا

سکھا دیا ہے زمانے نے بے بصر رہنا

وزیر آغا

سحر نے آ کر مجھے سلایا تو میں نے جانا

وزیر آغا

دھوپ کے ساتھ گیا ساتھ نبھانے والا

وزیر آغا

جبین سنگ پہ لکھا مرا فسانہ گیا

وزیر آغا

تھی نیند میری مگر اس میں خواب اس کا تھا

وزیر آغا

وہ برنگ دگر ہی جائے گا

وزیر آغا

صلیب سنگ پہ لکھا مرا فسانہ گیا

وزیر آغا

Records 1 To 24 (Total 29 Records)