Aik Ik Pal Tra Nayaab Bhi Ho Sakta Hai

ایک اک پل ترا نایاب بھی ہو سکتا ہے

ایک اک پل ترا نایاب بھی ہو سکتا ہے

حوصلہ ہو تو ظفر یاب بھی ہو سکتا ہے

بپھری موجوں سے الجھنے کا سلیقہ ہے اگر

یہ سمندر کبھی پایاب بھی ہو سکتا ہے

عمر تپتے ہوئے صحرا میں بسر کی جس نے

تو سرابوں سے وہ سیراب بھی ہو سکتا ہے

آپ دریا کی روانی سے نہ الجھیں ہرگز

تہہ میں اس کے کوئی گرداب بھی ہو سکتا ہے

لاکھ موتی ہی سہی وقت کی گردش میں کبھی

قیمتی کتنا ہو بے آب بھی ہو سکتا ہے

جس کو مجبور ہوا ہے تو کھرچنے پہ ظفرؔ

تیری آنکھوں کا حسیں خواب بھی ہو سکتا ہے

ظفر اقبال ظفر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(607) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of ZAFAR IQBAL ZAFAR, Aik Ik Pal Tra Nayaab Bhi Ho Sakta Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of ZAFAR IQBAL ZAFAR.