Har Aadmi Kahan Awj Kamal Tak Pouncha

ہر آدمی کہاں اوج کمال تک پہنچا

ہر آدمی کہاں اوج کمال تک پہنچا

عروج حد سے بڑھا تو زوال تک پہنچا

خود اپنے آپ میں جھنجھلا کے رہ گیا آخر

مرا جواب جب اس کے سوال تک پہنچا

غبار کذب سے دھندلا رہا ہمیشہ جو

وہ آئنہ مرے کب خد و خال تک پہنچا

چلو نہ سر کو اٹھا کر غرور سے اپنا

گرا ہے جو بھی بلندی سے ڈھال تک پہنچا

جسے بھروسا نہیں تھا اڑان پر اپنی

وہی پرندہ شکاری کے جال تک پہنچا

طواف کرتے رہے سب ہی راستے میں مگر

ہر ایک شخص ہی گرد ملال تک پہنچا

مری نجات کا ہوگا ظفرؔ وسیلہ وہی

جو لفظ نعت کا میرے خیال تک پہنچا

ظفر اقبال ظفر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(537) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of ZAFAR IQBAL ZAFAR, Har Aadmi Kahan Awj Kamal Tak Pouncha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of ZAFAR IQBAL ZAFAR.