Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay, Urdu Ghazal By Zafar Iqbal

Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Zafar Iqbal. Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay comes under the Social category of Urdu Ghazal. You can read Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay on this page of UrduPoint.

ہم نے آواز نہ دی برگ و نوا ہوتے ہوئے

ظفر اقبال

ہم نے آواز نہ دی برگ و نوا ہوتے ہوئے

اور ملنے نہ گئے اس کا پتا ہوتے ہوئے

آنکھ کے ایک اشارے سے کیا گل اس نے

جل رہا تھا جو دیا اتنی ہوا ہوتے ہوئے

ایک پتا سا لرزتا ہوں سر شاخ گماں

اپنے ہر سو کوئی طوفان بلا ہوتے ہوئے

چل رہے ہوتے ہیں دھارے کئی دریا میں سو ہم

سب میں شامل بھی رہے سب سے جدا ہوتے ہوئے

وقت پر آ کے برس تو گئے بادل لیکن

دیر ہی لگ گئی جنگل کو ہرا ہوتے ہوئے

ہم بھلا داد سخن کیوں نہیں چاہیں گے کہ وہ

آپ تعریف کا طالب ہے خدا ہوتے ہوئے

کچھ ہمیں بھی خبر اس کی نہ ہوئی خاص کہ ہم

کیا سے کیا ہوتے گئے اصل میں کیا ہوتے ہوئے

بات کا اور بھی ہو سکتا ہے مطلب اور پھر

لفظ تبدیل بھی ہوتا ہے ادا ہوتے ہوئے

کیا زمانہ ہے کہ اس گنبد بے در میں ظفرؔ

اپنی آواز کو دیکھا ہے فنا ہوتے ہوئے

ظفر اقبال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(5585) ووٹ وصول ہوئے

You can read Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay written by Zafar Iqbal at UrduPoint. Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay is one of the masterpieces written by Zafar Iqbal. You can also find the complete poetry collection of Zafar Iqbal by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Zafar Iqbal' above.

Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay is a widely read Urdu Ghazal. If you like Hum Ne Aawaz Nah Di Barg O Nawa Hotay Howay, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Social Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.