Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha, Urdu Ghazal By Zafar Iqbal

Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Zafar Iqbal. Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha comes under the Sad category of Urdu Ghazal. You can read Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha on this page of UrduPoint.

کچھ نہیں سمجھا ہوں اتنا مختصر پیغام تھا

ظفر اقبال

کچھ نہیں سمجھا ہوں اتنا مختصر پیغام تھا

کیا ہوا تھی جس ہوا کے ہاتھ پر پیغام تھا

اس کو آنا تھا کہ وہ مجھ کو بلاتا تھا کہیں

رات بھر بارش تھی اس کا رات بھر پیغام تھا

لینے والا ہی کوئی باقی نہیں تھا شہر میں

ورنہ تو اس شام کوئی در بدر پیغام تھا

منتظر تھی جیسے خود ہی تنکا تنکا آرزو

خار و خس کے واسطے گویا شرر پیغام تھا

کیا مسافر تھے کہ تھے رنج سفر سے بے نیاز

آنے جانے کے لیے اک رہگزر پیغام تھا

کوئی کاغذ ایک میلے سے لفافے میں تھا بند

کھول کر دیکھا تو اس میں سر بہ سر پیغام تھا

ہر قدم پر راستوں کے رنگ تھے بکھرے ہوئے

چلنے والوں کے لیے اپنا سفر پیغام تھا

کچھ صفت اس میں پرندوں اور پتوں کی بھی تھی

کتنی شادابی تھی اور کیسا شجر پیغام تھا

اور تو لایا نہ تھا پیغام ساتھ اپنے ظفرؔ

جو بھی تھا اس کا یہی عیب و ہنر پیغام تھا

ظفر اقبال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2427) ووٹ وصول ہوئے

You can read Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha written by Zafar Iqbal at UrduPoint. Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha is one of the masterpieces written by Zafar Iqbal. You can also find the complete poetry collection of Zafar Iqbal by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Zafar Iqbal' above.

Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha is a widely read Urdu Ghazal. If you like Kuch Nahi Samjha Hon Itna Mukhtasir Pegham Tha, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.