Sare Yaqeen Whem Thay Tukroon Main Khawab Bat Gaye

سارے یقین وہم تھے ٹکڑوں میں خواب بٹ گئے

سارے یقین وہم تھے ٹکڑوں میں خواب بٹ گئے

صلح کی رہ پہ آتے لوگ رستے سے کیوں پلٹ گئے؟؟

دونوں بہت ذہین تھے کرتے نباہ کس طرح ؟

دونوں نے ہجر طے کیا چپکے سے پیچھے ہٹ گئے

اپنے تنازعات کا کوئی بھی حل نہیں ہے اب

ذہن تو تھے ہی بد گمان دل بھی حسد سے اٹ گئے

چہرے کو صاف کرنے میں عمر گزر گئی مری

آئینہ صاف کیا کیا چہرے سے داغ ہٹ گئے

ایک عجب تھی کشمکش اپنا شمار ہے کہاں ؟

اس نے نگہ جو پھیر لی ابر گماں کے چھٹ گئے

اپنی تو ساری کائنات تیرے وجود تک ہی تھی

تجھ سے کٹے تو یوں ہوا دنیا جہاں سے کٹ گئے

سارے معاملات میں بات تری سند رہے

ہم تو خود اپنی رائے سے سوچے بغیر ہٹ گئے

بڑھنے لگی ہیں وحشتیں کھونے لگے حواس بھی

شب تو یہ حال تھا کہ ہم سائے سے ہی لپٹ گئے

زوہیر عباس

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(742) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Zohair Abbas, Sare Yaqeen Whem Thay Tukroon Main Khawab Bat Gaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Zohair Abbas.