معروف کوہ پیماہ حسن سد پارہ کے بیٹے عارف سدہ پارہ کی وزیر اعظم اور چیف جسٹس سے والد کیلئے وفاقی اور گلگت بلتستان حکومت کی جانب سے اعلان کردہ مراعات دینے کی اپیل

منگل اکتوبر 17:15

معروف کوہ پیماہ حسن سد پارہ کے بیٹے عارف سدہ پارہ کی وزیر اعظم اور چیف ..
اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 16 اکتوبر2018ء) معروف کوہ پیماہ قومی ہیرو حسن سد پارہ کے بیٹے عارف سدہ پارہ نے وزیر اعظم عمران خان اور چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار سے اپیل کی ہے کہ ان کے والد کیلئے وفاقی اور گلگت بلتستان حکومت کی جانب سے اعلان کردہ مراعات دی جائے۔ منگل کونیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے معروف کوہ پیماہ قومی ہیرو حسن سدہ پارہ کے بیٹے نے وزیراعظم عمران خان اور چیف جسٹس سے اپیل کرتے ہوئے کہا میرے والد واحد قومی ہیرو حسن سدہ پارہ جنہوں نے 8 ہزار میٹر بلند 6 پہاڑوں کو بغیر آکسیجن اور کم سے کم مد ت میں سر کر کے ملک و قوم کا نام دنیا بھر میں روشن کیا۔

ان پہاڑوں میں کے ٹو، نانگا بربت، گشہ بروم۔

(جاری ہے)

ون، گشہ بروم۔ٹو اور براڈ پیک شامل ہیں۔ 2009ء میں پاکستا ن پیپلز پارٹی کی وفاقی حکومت نے میرے والد کو صدارتی ایوارڈ (تمغہ امتیاز) سے نوازا لیکن جب دو سال بعد میرے والد نے 12مئی 2011ء کو دنیا کی بلند ترین پہاڑی ماؤنٹ ایورسٹ کو بغیر آکسیجن کے سر کر کے پورے قوم کا سر فخر سے بلند کیا۔ چھ بلند ترین پہاڑ سر کرنے والے وہ پہلے پاکستانی بنے، ایوارڈ کی درخواست جمع کرنے پر بتایا گیا کہ ملکی قانون کے مطابق پہلے اور دوسرے ایوارڈ کے درمیان قریباً پانچ سال کا عرصہ ہوتا ہے۔

7 سال گزرے لیکن تا حال میرے والد کو ایوارڈ سے نہیں نوازا گیا۔ پی پی پی کی سابقہ حکومت نے اعلان کیا تھا کہ وہ وفاقی دارلحکومت میں انعام کے طور پر میرے والد کو رہائشی مکان دیں گے جبکہ گلگت بلتستان کی صوبائی حکومت کی جانب سے بھی جی بی میں 10کنال زمین دینے کو باقاعدہ اعلان کیا گیا تھا۔ 90 فیصد تک کاغذی کارروائی کرنے کے باوجود بھی آج تک محروم رکھا گیا لیکن تاحال نہ مکان ملا اور نہ ہی زمین۔ حسن سد پارہ کے بیٹے نے کہا کہ صدر پاکستان، وزیر اعظم، گورنر گلگت بلتستان اور وفاقی وزراء کو درخواستیں ارسال کیں ہیں۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 16/10/2018 - 17:15:50

Your Thoughts and Comments