حیدر علی پی ایس ایل 5 میں سنگلز لیکر سینئر ساتھی کو سٹرائیک دے دیتے تھے: اعجاز احمد

ایک بات کہی بس اپنا شو دکھاؤ اور اپنے من پسند انداز سے کھیلو، پھر حیدر علی پی ایس ایل کے دوران اپنا تاثر چھوڑنے میں کامیاب ہوگئے :انٹرویو

Zeeshan Mehtab ذیشان مہتاب پیر ستمبر 18:00

حیدر علی پی ایس ایل 5 میں سنگلز لیکر سینئر ساتھی کو سٹرائیک دے دیتے تھے: ..
لاہور (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 21 ستمبر2020ء) پاکستان انڈر 19 کرکٹ ٹیم کے کوچ اعجاز احمد نے کہا ہے کہ نوجوان بلے باز حیدر علی پی ایس ایل 5 کے دوران سنگلز لے کر اپنے سینئر ساتھی کو اسٹرائیک دے دیتے تھے، میں نے انہیں جب بیٹنگ کرتے ہوئے دیکھا تو انہیں ایک ہی بات کہی کہ ٹی ٹوئنٹی میں شو ہی 4، 6 اور 8 اوورز کا ہوتا ہے۔میں نے حیدر علی کو ایک بات کہی کہ بس اپنا شو دکھاؤ اور اپنے من پسند انداز سے کھیلو اور پھر حیدر علی پی ایس ایل کے دوران اپنا تاثر چھوڑنے میں کامیاب ہو گئے۔

ایک انٹرویومیں انہوں نے کہاکہ ٹیلنٹ تو حیدر علی میں پہلے ہی تھا، پی ایس ایل کی اننگز نے بتایا کہ وہ دلیرانہ اننگز کھیل سکتا ہے۔حیدر علی نے اسی برس انڈر 19 ورلڈ کپ میں پاکستان کی نمائندگی کی اور پھر پی ایس ایل میں اپنی شناخت بنائی۔

(جاری ہے)

پی سی بی نے انہں سینٹرل کنٹریکٹ ایمرجنگ کٹگری میں شامل کیا اور پھر وہ دورہ انگلینڈ کے لیے ٹیم کے ساتھ 9 ہفتے رہے اور سیریز کا آخری ٹی ٹوئنٹی میچ کھیلنے میں کامیاب ہوئے اور پہلے ہی میچ میں نصف سنچری ایسے انداز سے داغی کہ ہر کوئی تعریف کرنے لگا۔

پاکستان انڈر 19 کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ اعجاز احمد کا کہنا ہے کہ گزشتہ برس حیدر علی اور ؤروحیل نزیر کو انہوں نے کہہ کر ایمرجنگ ٹیم میں ڈاالا، دونوں نے سنچریاں اسکور کیں جس سے ان کے اعتماد میں اضافہ ہوا، اب یہ پاکستان کا مستقبل ہیں۔اعجاز احمد نے کہا کہ حیدر علی میں بے پناہ ٹیلنٹ ہے لیکن میں نے جو چیز نوٹ کی اور اس کے بارے میں حیدر علی سے بھی بات کی ہے وہ یہ ہے ان کے ساتھ اسپنرز کا سامنا کرنے کے لیے کام کرنا ہے، ابھی جب بھی کیمپ لگے گا اسپنرز کے حوالے سے اس کی کمزوریوں پر کام کرنا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ایمرجنگ ایشیا کپ اور ورلڈ کپ کے دوران حیدر علی زیادہ تر اسپنرز کے خلاف آوٹ ہوئے، ہم نے اب اس پر کام کرنا ہے۔اعجاز احمد نے کہا کہ مختصر دورانیے کی کرکٹ میں تو حیدر علی نے اپنا آپ دکھا دیا ہے، اس میں تو ان کو کسی ایشو کا سامنا نہیں ہے، میں نے حیدر علی سے کہا ہے کہ آپ نے اپنا شو دکھا تو دیا کیونکہ کھیلنا آسان ہے، اس انداز کو برقرار رکھنا مشکل ہے اور آپ کو یہ مشکل کام کرنا ہے۔

انہوںنے کہاکہ ہمیں حیدر علی کے ویک پوائنٹس پر کام کرنا ہے، حیدر علی کو چار روزہ کرکٹ میں صبر و تحمل کے ساتھ کھیلنا ہو گا۔انہوں نے کہا کہ میں یہ نہیں کہتا کہ چار روزہ کرکٹ میں حیدر کی پرفارمنس اچھی نہیں ہے، نوجوان بیٹسمین نے چار روزہ کرکٹ میں بھی اپنی صلاحیتیوں کے جوہر دکھائے، فائنل میں غیر معمولی کھیل پیش کیا، حیدر علی ینگ بلڈ ہے بس انہیں چار روزہ کرکٹ میں وکٹ پر لمبا ٹھہرنا آنا چاہیے اور اس کے لیے صبر و تحمل کا مظاہرہ کرنا ہے۔

اعجاز احمد نے کہا کہ دورہ انگلینڈ میں حیدر علی کو اگرچہ ایک ہی میچ ملا لیکن انہیں 9 ہفتے سینئر ٹیم کے ساتھ رہ کر بھرپور ٹرینگ کا موقع ملا ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر حیدر علی نے اپنی فٹنس پر کام کیا ہے تو میں سمجھتا ہوں کہ اس کا حیدر علی کو بہت فائدہ ہو گا۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 21/09/2020 - 18:00:48

Your Thoughts and Comments