جنوبی افریقی بیٹنگ کے طوفان نے آئرلینڈ کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا

Janobi Africi Batting K Tofaan Ne Ireland Ko Bhi Apni Lapeet Mein Ley Liya

پروٹیز رواں ورلڈکپ میں دوسری بار 400رنز پار گئے، اگلا ٹکرا پاکستان سے ہوگا

Ejaz Wasim Bakhri اعجاز وسیم باکھری بدھ مارچ

Janobi Africi Batting K Tofaan Ne Ireland Ko Bhi Apni Lapeet Mein Ley Liya

ہرورلڈکپ کی طرح اس ورلڈکپ میں بھی جنوبی افریقی ٹیم پوری قوت کے ساتھ میدان میں اتری اور رنز کے انبار لگانے کے بعد اپنی تباہ کن باؤلنگ سے حریف ٹیموں کو روندنا شروع کردیا۔بھارت کیخلاف شکست نے افریقی ٹیم کے تیور ہی بدل دئیے، بھارت کیخلاف میچ کے بعد جنوبی افریقہ نے دو میچز کھیلے جس میں چار سو سے زائد رنز سکور کیے۔ گزشتہ روز بھی توقع تھی کہ آئرش ٹیم جنوبی افریقہ کے سامنے کچھ مزاحمت کریگی لیکن جنوبی افریقہ نے آئرلینڈکو باآسانی210رنز سے ہرادیا۔ رواں ورلڈکپ میں جنوبی افریقی ٹیم ماضی کی طرح خطرناک حریف بن چکی ہے، گوکہ اسے بھارت کیخلاف شکست کا سامنا کرنا پڑا لیکن ڈی ویلیئرزالیون کو یہ کریڈٹ بھی جاتا ہے کہ وہ بھرپور تیاری اور بہترین ٹیلنٹ کے ساتھ میگاایونٹ میں شرکت کررہے ہیں، افریقی ٹیم کا ایک ایک کھلاڑی اپنی ٹیم کیلئے محنت کرتا نظر آرہا ہے اور یوں محسوس ہوتا ہے کہ تمام گیارہ کھلاڑی میچ میں پرفارم کرتے ہیں۔

(جاری ہے)

ہنسی کرونئیے کا دور ہویا پھر گریم سمتھ کی کپتانی کا دس سال، جنوبی افریقہ ہمیشہ سخت حریف ثابت ہوئی ہے اور بڑے ایونٹس میں افریقی ٹیم فیورٹ کی حیثیت سے میدان میں اترتی تاہم کوارٹریا سیمی فائنل میں بدقسمتی آڑے آجاتی ہے۔ اس بار افریقی ٹیم اپنی بیٹنگ اور باؤلنگ میں جس قوت کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے اس سے لگ رہا ہے کہ عالمی کپ جیتنے کیلئے فیورٹ حقیقی معنوں میں جنوبی افریقہ ہے ناکہ آسٹریلیا، بھارت یا نیوزی لینڈ۔ کوارٹرفائنل میں تو جنوبی افریقہ کو کمزور حریف ہی ملے گا لیکن سیمی فائنل میں افریقی ٹیم کا ٹکرا سخت ہوگااور وہ میچ دیکھنے کے لائق ہوگا کیونکہ افریقی ٹیم سیمی فائنل سے آگے نہیں جا پاتی، اس بار کیا ہوگا یہ فیصلہ تو وقت ہی کریگا لیکن فی الحال افریقی ٹیم ورلڈکپ میں ریکارڈزپے ریکارڈ بنارہی ہے اور پوری دنیا کے کرکٹ شائقین کو اپنی بیٹنگ سے محظوظ بھی کرارہی ہے۔جنوبی افریقہ نے 411رنزسکورکرکے ورلڈ کپ کی تاریخ کا دوسرا بڑا مجموعہ بناڈالا،جنوبی افریقہ دو لگاتار میچوں میں 400 کا ہندسہ عبورکرنے والی دنیائے کرکٹ کی واحد ٹیم بن گئی،ہاشم آملہ اور ڈوپلیسی کی شاندارسنچریاں سکور کرکے اپنی ٹیم کی فتح میں کلیدی کردار ادا کیا ۔دونوں بیٹسمینوں نے دوسری وکٹ پر247 رنزکی ریکارڈشراکت قائم کی۔ آسٹریلیا کے دارالحکومت کینبرا کے مینوکا اوول گراؤنڈ میں پول بی کے میچ میں جنوبی افریقہ نے ٹاس جیت کربیٹنگ کی اورحالیہ ٹورنامنٹ میں411رنزکا سب سے بڑا اسکوربناڈالا، پروٹیزٹیم نے مسلسل دوسرے میچ میں 400کا ہندسہ عبورکیا،12کے مجموعی اسکورپرکوئنٹن ڈی کوک کے پویلین لوٹنے کے بعد ہاشم آملہ اورفیف ڈوپلیسی نے آئرش باولرزکی جم کردھلائی کی، دونوں بیٹسمینوں نے دوسری وکٹ پر247 رنزکی ریکارڈشراکت قائم کی،10 کے انفرادی اسکورپرہاشم آملہ کا کیچ ڈراپ ہوا جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے انہوں نے سنچری داغ دی،ہاشم آملہ نے128 بالزپر16 چوکوں اور4چھکوں کی مدد سے 159 رنزکی کیرئیربیسٹ اننگزکھیلی،ڈوپلیسی 109رنزبنا کرآوٹ ہوئے، رلی روسواورڈیوڈ ملرنے برق رفتاراننگزکھیل کرٹیم کا مجموعہ 411 رنزتک پہنچادیا، روسونے 30 گیندوں پر61 اورملرنے 46 رنزبنائے۔ آئرلینڈ کی جانب سے اینڈی مکبرائن نے 2 جب کہ جان مونی اور کیون اوبرائن نے ایک، ایک وکٹ حاصل کی۔جواب میں آئرش ٹیم 45اوورزمیں210رنز بناکر آؤٹ ہوگئی اور جنوبی افریقہ نے باآسانی 201رنز سے کامیابی حاصل کرلی۔آوٴٹ ہونے والے پہلے آئرش بلے باز پال سٹرلنگ تھے جنھیں ڈیل سٹین نے وکٹوں کے پیچھے کیچ کروایا۔امپائر نے انھیں آوٴٹ نہیں دیا لیکن ریویو میں گیند واضح طور پر ان کے بلے سے چھو کر جاتی دکھائی دی اور یوں جنوبی افریقہ کو پہلی کامیابی مل گئی۔اس میچ میں امپائرنگ کا معیار خاصا ناقص رہا ہے اور تین مرتبہ تھرڈ امپائر نے گراوٴنڈ امپائر کی جانب سے دیے گیے فیصلے کو تبدیل کیا۔ہاشم آملہ اور فاف ڈوپلیسی نے دوسری وکٹ کے لیے 247 رنز بنائے۔تیسرے اوور میں ایبٹ نے ولیم پوٹر فیلڈ کو آوٴٹ کیا تو اگلے ہی اوور میں سٹین نے ایڈ جوائس کو آملہ کے ہاتھوں کیچ کروا کے جنوبی افریقہ کو تیسری کامیابی دلوا دی۔نیل او برائن آوٴٹ ہونے والے چوتھے بلے باز تھے جو ایبٹ کی دوسری وکٹ بنے۔ ان کی جگہ آنے والے ولسن بھی بغیر کوئی رن بنائے ایبٹ کے اگلے اوور میں پویلین لوٹ گئے۔نصف سنچری بنانے والے اینڈی بلبرین اور کیون او برائن نے چھٹی وکٹ کے لیے 81 رنز کی شراکت قائم کی جسے مورکل نے بلبرین کو 58 کے سکور پر آوٴٹ کر کے ختم کیا۔ابراہم ڈی ویلیئرز نے جنوبی افریقہ کے لیے ساتویں اور ایبٹ نے آٹھویں وکٹ لی۔جنوبی افریقہ کی طرف سے کائل ملز نے 4جبکہ مورنے مورکل نے 3اورڈیل سٹین نے دووکٹیں حاصل کیں،جنوبی افریقہ کے ہاشم محمود آملہ کو مین آف دی میچ قراردیا گیا۔

مزید مضامین :

Your Thoughts and Comments