پہلے راؤنڈ میں بلے بازوں کا راج،42گروپ میچزمیں35سنچریاں

Pehle Round Main Balle Bazoon Ka Rajj

سنگاکارا کی چار سنچریاں ، کرس گیل کی ڈبل سنچری، ڈی ویلیئرز کے دھواں دھار 150پہلے راؤنڈ کو کلر فل بناگئے

Ejaz Wasim Bakhri اعجاز وسیم باکھری منگل مارچ

Pehle Round Main Balle Bazoon Ka Rajj

آئی سی سی کرکٹ ورلڈکپ 2105ء بلے بازوں نے رنز کے ڈھیر لگادئیے ۔ میگاایونٹ میں باؤلرز نے بھی اچھی کارکردگی دکھائی لیکن بلے بازوں کی کارکردگی شاندار رہی اور کئی ریکارڈ تہس نہس کردئیے۔ باؤلرز میں سے وہاب ریاض، مچل سٹارک اور ٹم ساؤتھی کی کارکردگی شاندار رہی ہے لیکن اگر ان کے مقابلے میں فبلے بازوں کی کارکردگی دکھائی جائے تو رنز کے انبار لگادئیے اور بے شمار ریکارڈ توڑ بھی ڈالے۔ رواں ورلڈکپ میں بلے بازوں کے حق میں بیٹنگ وکٹیں بنائی گئیں حالانکہ آسٹریلیا کے بارے میں مشہور ہے کہ یہاں تیز وکٹیں بنائی جاتی ہیں جو باؤلرز کیلئے مدد گار ہوتی ہیں لیکن اس بار ورلڈکپ میں بیٹنگ فرینڈلی وکٹوں پر رنز کے انبار دیکھنے میں آئے۔ ویسٹ انڈیز نے ایک بار اور جنوبی افریقہ نے دو بار میگاایونٹ میں چار رنز کے ہدف عبور کیے جس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ یہاں کی وکٹیں بلے بازوں کیلئے کتنی مددگار ثابت ہوئی ہیں۔

(جاری ہے)

انفرادی کارکردگی میں اگر بلے بازوں کی کامیابیوں کا ذکر کیا جائے تو اب تک42گروپ میچزکے اختتام پر35سنچریاں بن گئیں،میگا ایونٹ میں کرس گیل نے ڈبل سنچری بنانے کا اعزازبھی حاصل کیا،بنگلہ دیش کے محموداللہ،تلکارتنے دلشان،بھارت کے شیکھردھون اورزمبابوے کے برینڈن ٹیلرنے دودو سنچریاں بناڈالیں،پاکستان کی جانب سے واحد سنچری سرفرازاحمدنے بنائی ۔اعدادوشمار کے مطابق آئی سی سی کرکٹ ورلڈکپ 2105ء بلے بازوں نے رنز کے ڈھیر لگادئیے ،42گروپ میچزکے اختتام پر35سنچریاں بن گئیں۔میگا ایونٹ میں کرس گیل نے ڈبل سنچری بنانے کا اعزازبھی حاصل کیا،بنگلہ دیش کے محموداللہ،تلکارتنے دلشان،بھارت کے شیکھردھون اورزمبابوے کے برینڈن ٹیلرنے دودو سنچریاں بناڈالیں،پاکستان کی جانب سے واحد سنچری سرفرازاحمدنے بنائی۔ورلڈکپ میں سری لنکا کے کمارسنگاکارانے سب سے زیادہ 4سنچریاں سکوکی ہیں ۔انہوں نے میگاایونٹ میں مسلسل چار سنچریاں بناکر عالمی ریکار ڈقائم کیا ہے۔ڈبل سنچری کا اعزاز ویسٹ انڈیز کے جلاد صفت بلے باز کرس گیل کو حاصل ہے ۔جنوبی افریقہ کی جانب سے جے پی ڈومنی، ہاشم محمودآملہ،اے بی ڈی ویلیئرز،ڈیوڈملر اورفیف ڈوپلیسی ،آسٹریلیا کی جانب سے ایرون فنچ،ڈیوڈوارنر اور گلین میکس ویل،ویسٹ انڈیز کی جانب سے کرس گیل،مارلون سیموئلزاور لینڈل سیمنز،بھارت کی جانب سے ویرات کوہلی اور سریش رائنا ،متحدہ عرب امارات کی جانب شیمان انوربٹ ،سکاٹ لینڈ کے کائل کوئیٹزر،انگلینڈکی جانب سے جو روٹ اور معین علی ،پاکستان کے سرفرازاحمد، آئرلینڈ کے ولیم پورٹر فیلڈاور ایڈ جوائس،نیوزی لینڈ کی جانب سے مارٹن گپٹل ،سری لنکا کی جانب سے سنگاکاراکے بعد لاہیروتھیرمانے اورمہیلا جے وردھنے نے ایک ایک سنچری سکور کی ہے۔بدقسمتی سے افغانستان کی جانب سے کوئی سنچری سکور نہیں ہوئی ۔

مزید مضامین :

Your Thoughts and Comments