یورپ میں شدید برف باری، سردی اوربرفانی تودے گرنے سے 17 افراد ہلاک

یونان میں درجہ حرارت منفی 23،جرمن شہربرک ٹیس گاڈن میں کئی روز کی برفباری کے بعد ہنگامی حالت نافذ

یورپ میں شدید برف باری، سردی اوربرفانی تودے گرنے سے 17 افراد ہلاک
برسلز(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 جنوری2019ء)یورپ بھر میں شدید برف باری کے باعث ریڈ الرٹ جاری کردیا گیا سردی کے باعث 17 افراد ہلاک ہوگئے، آسٹریا اور جرمنی کے سرحدی علاقے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ، چند گھنٹوں میں تین تین فٹ برف پڑنے سے نظام زندگی مفلوج اور لوگ محصور ہوکر رہ گئے، برفانی تودے گرنے کے واقعات بھی پیش آئے ۔پولینڈ، ناروے، چیک ری پبلک اور سلواکیہ میں بھی برفباری کے باعث مشکلات کا سامنارہا، یونان کے بعض حصوں میں درجہ حرارت منفی23 ڈگری تک گرگیا ۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق قطب شمالی سے اٹھنے واالی یخ بستہ ہوائوں کے نتیجے میں یورپ برف سے ڈھک گیا ، آسٹریا اور جرمنی کے سرحدی علاقے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ، چند گھنٹوں میں تین تین فٹ برف پڑنے سے نظام زندگی مفلوج اور لوگ محصور ہوکر رہ گئے، برفانی تودے گرنے کے واقعات بھی پیش آئے ۔

(جاری ہے)

جرمن شہربرک ٹیس گاڈن میں کئی روز کی برفباری کے بعد ہنگامی حالت نافذ کردی گئی، فوجی گاڑیوں میں برف میں گھرے عوام کو کھانے پینے کی اشیاء پہنچائی گئیںجبکہ فوجی نجی و سرکاری عمارتوں اور سڑکوں سے برف ہٹانے میں مصروف رہے۔

پولینڈ، ناروے، چیک ری پبلک اور سلواکیہ میں بھی برفباری کے باعث مشکلات کا سامنارہا، یونان کے بعض حصوں میں درجہ حرارت منفی23 ڈگری تک گرگیا ۔دوسری جانب ترکی میں بحیرہ روم کے ساتھ واقع شہر میں ہر شے برف سے ڈھک گئی ہے اور گھروں سے باہر نکلنا دشوار ہوگیا ہے

Your Thoughts and Comments