پاکستان آسیان رکن ممالک سے تجارت اور معاشی روابط کو گہرا کرنے کیلئے پرعزم ہے،سہیل محمود

سیکریٹری خارجہ کی آسیان ہیڈز آف مشنز کے ساتھ گول میز ملاقات ، تمام پہلوئوں سے شراکت داری کو مضبوط بنانے کے پاکستان کے عزم کا اعادہ

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 05 مارچ2021ء) سیکریٹری خارجہ سہیل محمود نے اسلام آباد میں تعینات آسیان کے ہیڈز آف مشنز کے ساتھ راونڈ ٹیبل مذاکرہ کا اہتمام کیا۔ ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق وژن ایسٹ ایشیاء پالیسی کی روشنی میں سیکریٹری خارجہ سہیل محمود نے آسیان کے ساتھ تمام پہلوئوں سے شراکت داری کو مضبوط بنانے کے پاکستان کے عزم کا اعادہ کیا۔

انہوں نے خاص طورپر سیاسی، معاشی، سکیورٹی، سیاحتی، تعلیمی اور ثقافتی پہلووں سے قریبی تعاون استوار کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔ سیکریٹری خارجہ نے زور دیا کہ پاکستان جنوب مشرقی ایشیائی ممالک کے ساتھ اپنے تعلقات کو بہت زیادہ ترجیح دیتا ہے اور علاقائی تناظر میں آسیان کی مرکزیت کاادراک رکھتا ہے۔ سیکریٹری خارجہ سہیل محمود نے ان متعدد اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا جو پاکستان نے آسیان ممالک سے روابط بڑھانے کے لئے کئے ہیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہاکہ پاکستان آسیان رکن ممالک سے تجارت اور معاشی روابط کو گہرا کرنے کے لئے پرعزم ہے۔ انہوں نے کہاکہ یہ اقدامات پاکستان کے معاشی سفارت کاری کے اقدام کے تناظر میں اٹھائے جارہے ہیں جو قیادت کے جیو اکنامکس پر توجہ مرکوز ہونے کی سوچ کے تحت ہیں۔ ملاقات میں تجارت، باہمی سرمایہ کاری، سکیورٹی، دفاعی تعاون، سیاحت، تعلیم اور ثقافت کے فروغ پر بات چیت ہوئی۔

ملاقات میں آسیان کے ادارہ جاتی وسیع طریقہ کار کو بھرپور طور پر بروئے کار لانے اور علاقائی معاشی جامع شراکت داری (آر۔ای۔سی۔پی)اور چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک)جیسے دورس اثرات رکھنے والے اقدامات کرنے کے امکانات تلاش کرنے پر اتفاق کیاگیا۔ ملاقات میں ملائیشیاء، فلپائن، انڈونیشیاء، برونائی دارالسلام، میانمار، تھائی لینڈ اور ویتنام کے ہیڈز آف مشنز نے شرکت کی۔ترجمان کے مطابق پاکستان 1993 سے آسیان کا سیکٹورل ڈائیلاگ پارٹنر اور 2004 سے آسیان علاقائی فورم کا رکن ہے۔

Your Thoughts and Comments