نیدرلینڈ نے بند ہوتی ہوئی جیلوں کو لگژری ہوٹلوں میں بدل دیا
UrduPoint Android Application

نیدرلینڈ نے بند ہوتی ہوئی جیلوں کو لگژری ہوٹلوں میں بدل دیا

ہفتہ جون 4:07 pm

آج کل نیدرلینڈ ایک دلچسپ مسئلے سے دوچار ہے۔نیدر لینڈ میں اتنے قیدی ہی نہیں جو  ملک میں موجود جیلوں کو بھر سکیں۔پچھلی دو دہائیوں میں جرائم کی تیزی سے کم ہوتی شروع کے باعث ملک کی ایک تہائی جیلیں بند کر دی گئی ہیں۔نیدر لینڈ نے قریبی ملکوں کو اپنی جیلیں کرائے پر بھی دینا شروع کی تھیں لیکن پھر بھی بہت سی خالی جیلیں بند کرنا پڑ رہی ہیں۔
نیدرلینڈ نے اس مسئلے کا دلچسپ حل نکالا ہے۔

نیدرلینڈ نے ملک میں بند ہونے والی جیلوں کو لگژری  ہوٹل میں بدل دیا ہے۔اس طرح کی سابقہ جیل یا موجودہ ہوٹل Het Arresthuis (اردو ترجمہ: گھر  میں نظر بند) ہے۔ اس کی

خبر کی مزید تفصیل پڑھئیے

کوٹھریوں کو اس انداز سے ہوٹل میں   بدلا گیا ہے کہ لوگ اس کی جیل کے طور پر شناخت نہیں کر سکتے۔

(خبر جاری ہے)

تاہم جیل کے دروازے پہلے جیسے ہی ہیں لیکن اُنہیں بھی رنگ و روغن سے بدلنے کی کوشش کی گئی ہے۔

اب جیل کا ہال وے اور سیڑھیاں بھی پہلے سے مختلف نظر آتی ہیں۔ ان کی شکل اب ایسی ہوگئی ہے، جیسے فلموں میں جیلوں کےہال وے کی ہوتی ہے۔اس ہوٹل میں چار سوئٹ ہیں، جن کے نام جیلر، لائر(وکیل)، ڈائریکٹر اور جج ہیں۔جیل کے سابق ڈائریکٹر کے کمرے کا کرایہ 125 سے 215 ڈالر تک ہے۔اس ہوٹل میں وہ تمام سہولیات ہیں، جو کسی بھی دوسرے ہوٹل یا گیسٹ ہاؤس میں ہوتی ہیں۔

اس خبر نوں پنجابی وچ پڑھو