برطانیہ کا غلیظ ترین طریقہ ادائیگی

Ameen Akbar امین اکبر پیر مئی 23:54

برطانیہ کا غلیظ ترین طریقہ ادائیگی

کیا آپ نے سوچا ہے کہ آپ کی جیب میں موجود کرنسی نوٹوں یا سکوں کو آپ کے علاوہ کتنے افراد نے چھوا ہے؟ کرنسی نوٹوں اور سکوں کو اتنے زیادہ لوگ چھوتے ہیں کہ اسے جان کر جراثیم سے ڈرنے والے افراد کانپنے لگیں گے۔اگر کہا جائے کہ کرنسی نوٹ غلاظت کی فیکٹریاں ہیں توغلط نہ ہوگا۔
بنک آف انگلینڈ اور رائل منٹ کے تازہ ترین اعداد  و شمار کے مطابق برطانیہ میں اس وقت 3 ارب بنک نوٹ اور 29 ارب سکے گردش میں ہیں۔

یہ نوٹ اورسکے برطانیہ کی پوری آبادی  میں گردش کرتے رہتے ہیں۔ اندیشہ ہے کہ نوٹوں اور سکوں  کی گردش کے ساتھ جراثیم بھی  ایک سے دوسرے فرد تک منتقل ہوتے ہیں۔
آپ  اگر اپنے بٹوے میں موجود چیزیں دیکھیں تو آپ کو اندازہ ہوگا کہ سب پر ہی کسی نہ کسی حد تک جراثیم  ہیں لیکن بٹوے کی سب چیزوں میں بنک نوٹ غلیظ ترین ہوتے ہیں۔

(جاری ہے)


ماہرین نے ایک تجربے کے دوران دیکھنا چاہا کہ کرنسی نوٹ کتنے زیادہ غلیظ ہوتے ہیں۔

انہوں نے  کرنسی نوٹوں کو پیٹری ڈش میں رکھا اور پانچ دن کے لیے گرم ماحول میں چھوڑ دیا۔ گرم ماحول کی وجہ سے نوٹوں پر بیکٹیریا کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہوا۔ تجربے سے پتا چلا کہ 10 پاؤنڈ کے نوٹ پر سب سے زیادہ جراثیم ہوتے ہیں۔ماہرین کا کہنا ہے کہ برطانیہ میں زیر گردش 1 ارب کرنسی نوٹوں کے لین دین میں زیادہ احتیاط کی ضرورت ہے۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ سکوں میں 5 پنس کا سکہ سب سے غلیظ ثابت ہوا ہے۔

ماہرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ انہوں نے کریڈٹ کارڈ سے ادائیگی کو صحت کے حوالے سے بھی سب سے زیادہ  محفوظ پایا ہے۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ  کرنسی نوٹ یا سکے جب ایک شخص سے دوسرے کے پاس جاتے ہیں تو اپنے ساتھ لازمی جراثیم کو بھی منتقل کرتے ہیں۔ معاملہ اس وقت مزید گھمبیر ہو جاتا ہے جب کچھ لوگ سکوں کو  منہ میں ڈال لیتے ہیں۔
فارماسیوٹیکل منیجر بوپا جسٹن ہائیڈ ویسٹ کا کہنا ہے کہ ہمیں عام طور پر باتھ روم، جانوروں کو چھونے اور کچا گوشت تیار کرنے کے بعدہاتھ دھونے چاہیے،  ہاتھوں کو دھونا گرد، وائرس اور بیکٹریا صاف کرنے اور بیماریوں کو پھیلنے سے روکنے کے لیے ضروری ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کا کہنا ہے کہ  ہاتھوں کو دھونے کے لیے چلتا ہوا گرم پانی اور صابن استعمال کرنا چاہیے۔ ہاتھ دھوتے ہوئے ہتھیلیاں،  انگلیوں کی پوریں اور انگلیوں کے درمیانی حصے ،جہاں بیکٹریاں چھپے ہوتے ہیں، کو بھی صاف کرنا چاہیے۔
کرنسی نوٹوں کے لین دین کے بعد ہاتھوں کو دھونا ضروری نہیں لیکن اگر آپ کو لگے کہ اس سے ہاتھ گندے ہوئے ہیں تو دھو لینے چاہیے۔ ہاتھوں کو  کثرت سے دھونا بھی جلد کے لیے نقصان دہ ہو سکتا ہے۔

وقت اشاعت : 13/05/2019 - 23:54:12

متعلقہ عنوان :

Your Thoughts and Comments