بند کریں
خواتین مضامین100 نامور خواتینملکہ عائشہ امِ محمد

مزید 100 نامور خواتین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
ملکہ عائشہ امِ محمد
یہ وہ خاتون ہے جس کے متعلق تاریخ ہمیں زیادہ کچھ نہیں بتاتی تاہم اس کے ایک خاص موقع پر ادا کئے گئے الفاظ تاریخ نے اپنے سینے میں اس طرح محفوظ کئے ہیں

ملکہ عائشہ امِ محمد
یہ وہ خاتون ہے جس کے متعلق تاریخ ہمیں زیادہ کچھ نہیں بتاتی تاہم اس کے ایک خاص موقع پر ادا کئے گئے الفاظ تاریخ نے اپنے سینے میں اس طرح محفوظ کئے ہیں کہ ان کو فراموش کرنا ناممکن ہو گیا ہے۔
سپین پر مسلمانوں نے سات سو سال تک حکومت کی لیکن خانہ جنگیوں اور بیرونی حملہ آوروں نے ملک کے حجم کو کم کر دیا یہاں تک کہ مسلمانوں کی حکومت غرناطہ تک سمٹ کر رہ گئی۔ اس وقت غرناطہ کا حکمران ابو عبداللہ تھا۔ اس نے ایک معاہدے کے تحت غرناطہ کی حکومت کا خاتمہ ہوگیا۔ جب ابو عبداللہ غرناطہ سے رخصت ہو رہا تھا تو شہر سے باہر نکل کر ایک بلند جگہ پر کھڑے ہو کر غرناطہ پر نگاہ ڈالی ۔اس کے حلق سے سرد آہ نکلی اور آنکھوں میں آنسو بھر آئے۔ اس وقت اس کی نیک ، غیرت مند اور بہادر ماں ملکہ عائشہ ام محمد بھی اس کے ساتھ تھی۔ اس نے یہ تاریخی الفاظ کہے۔
”جس سلطنت کی تو مردوں کی طرح حفاظت نہ کر سکا ، اس پر عورتوں کی طرح آنسو نہ بہا۔“
وہ مقام جہاں کھڑے ہوکر عبداللہ نے وہ آہِ سرد بھری تھی آج تک سپین میں ” بربر کی آخری آہ“ کے نام سے مشہور ہے۔

(2) ووٹ وصول ہوئے