Chehre K Daagh Dhabbe Khobsorat Jild Main Rukawat

چہرے کے داغ دھبے خوبصورت جلد میں رکاوٹ

بدھ جون

Chehre K Daagh Dhabbe Khobsorat Jild Main Rukawat

عمر کے بڑھنے کے ساتھ ہماری جلد کی رنگت اور ساخت میں رونما ہونے والی تبدیلیاں قدرتی ہوتی ہیں لیکن سنگین نوعیت کی تبدیلیاں غلط مصنوعات نامناسب صفائی کے نتیجے میں پیدا ہوتی ہیں
نامعلوم زمانوں سے عورتیں ایسے طرح طرح کے طریقے تلاش کرتی اور دریافت کرتی رہی ہیں جن کی مدد سے وہ اپنے آپ کو زیادہ سے زیادہ خوبصورت بناسکیں اور دیکھنے والوں کو وہ حسین نظر آئیں۔

چہرہ جسم کا وہ حصہ ہے جو عناصر کی زد میں سب سے زیادہ رہتا ہے‘جو دیکھنے والوں کو عیب سے زیادہ نظر آتا ہے ۔اور جس پر خوبصورت بنانے والی ہر قسم کی اشیاء کا سب سے زیادہ تجربہ کیا جاتاہے۔
جلد کی حالت کے بارے میں عام طور پر رنگت اور ٹیکسچر (Texture)کے حوالوں کے ساتھ بات کی جاتی ہے۔مختلف اقسام کی جلد مختلف رنگتوں اور ٹیکسچرز کی حامل ہوتی ہے ۔

(جاری ہے)

عمر کے بڑھنے کے ساتھ ساتھ ہماری جلد کی رنگت اور ٹیکسچر میں جو تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں‘وہ قطعی طور پر قدرتی ہوتی ہیں‘لیکن زیادہ نقصان دہ اور سنگین نوعیت کی تبدیلیاں غلط قسم کے طریقوں کے استعمال کے نتیجے میں پیدا ہو سکتی ہیں۔
ان میں سے بعض یہ ہیں:
جلد کی جانب نامناسب توجہ
روغنی(Oily)جلد کی نامناسب طریقے سے صفائی کے نتیجے میں جلد کالی ہوجاتی ہے اور ایسے مہا سے پیدا ہوتے ہیں جو داغ دھبے چھوڑ جاتے ہیں۔

اگر بڑھتے ہوئے مساموں پر مناسب اسٹیمنگ اور ٹوننگ (Steaming and Toning) کے ذریعے قابو نہ پایا جائے تو روغنی جلد کا ٹیکسچر خراب ہو جاتاہے۔
غلط قسم کے کاسمیٹکس کا استعمال
ایسے صابنوں کا استعمال جن میں کریم اور تیل کی مقدار زیادہ ہو اور میک اپ کی ایسی اشیاء کا استعمال جن میں تیل والے کیمیکلز شامل ہوں‘روغنی جلد پر خراب اثر ڈالتا ہے ۔

رنگ گورا کرنے والی بعض کریموں میں مرکری ڈرگ مادے شامل ہوتے ہیں جو کہ دھوپ میں جلد پر داغ دھبے پیدا کر دیتے ہیں اور رنگت کو خراب کر دیتے ہیں۔
جلد پر میڈیکیٹڈ(Medicated)یا تیز قسم کے صابنوں کے استعمال سے جلد کی چمک خراب ہو جاتی ہے۔
سورج کی شعاعیں اور ٹیننگ
دھوپ کے بہت زیادہ سامنے آنے اور دھوپ میں تپ جانے سے جلد سیاہ ہو جاتی ہے۔

دھوپ کی تیزی جلد کو اس کے رقیق مادے سے محروم کر سکتی ہے جس سے ٹیکسچر کی نفاست متاثر ہو سکتی ہے۔بعض دوائیں مثلاً مانع حمل گولیاں اور بلڈ پریشرکی دوائیں دھوپ میں جلد پر نا خوشگوار اثرات مرتب کرتی ہیں اور سرخ داغ دھبے پیدا کرتی ہیں جن میں خارش ہوتی ہے۔
مہاسے
مہاسے جلد کی ایک عام بیماری ہیں۔ان میں جلد کے مسام بند ہو جاتے ہیں اور دانے نمودار ہو جاتے ہیں تقریباً 75فیصدی نوعمر اور نوجوان بالغ افراد مہاسوں کاشکار ہوتے ہیں ۔

تیس اور چالیس کی عمر کے مردوں اور عورتوں کے بھی مہاسے نکل سکتے ہیں مہاسوں کی اصل وجہ تواب بھی غیر واضح ہے‘لیکن ان دھبوں کے بارے میں زیادہ معلومات موجود ہیں جومہاسوں کی وجہ سے پیدا ہوتے ہیں ۔اس تکلیف سے نجات کیلئے زیادہ سے زیادہ طریقہ ہائے علاج تلاش کئے جارہے ہیں۔
مہاسوں کی وجہ
مہاسوں کا نکلنا جلد کی ایک ایسی حالت ہے جو ان غدود کی زیادہ بڑھی ہوئی فعالیت سے پیدا ہوتی ہے جو جلد پر روغنی مادے خارج کرتے ہیں۔

دانے اور دھبے عام طور سے چہرے پر نمودار ہوتے ہیں جہاں ان تیل پیدا کرنے والے غدود کی سب سے زیادہ تعداد موجود ہوتی ہے ۔تاہم پشت‘سینہ اور شانے بھی متاثر ہو سکتے ہیں۔
مہاسوں کے پیدا ہونے میں بہت سارے عوامل کار فرما ہوتے ہیں جن میں ہارمونز اصل کردار ادا کرتے ہیں ۔یہ ہارمونز بلوغت کے وقت پیدا ہوتے ہیں ۔مردانہ ہارمون ٹیسٹوس ٹیرون (Testosterone)جوکہ قدرتی طور پر عورتوں میں بھی اسی طرح پایا جاتا ہے جس طرح کہ مردوں میں Sebaceousغدود کو زیادہ سے زیادہ روگنی مادہ پیدا کرنے کے لئے متحرک کر تا ہے۔

اس مادے کو سیبم(Sebum)کہتے ہیں ۔اس کی وجہ سے جلد زیادہ چکنی ہو جاتی ہے۔
جب سیبم کے اخراج کی تعداد میں اضافہ ہو جاتا ہے تو ایک بال کے گڑھے کے گرد کا علاقہ اور جلد کے اندر کھلنے والی جگہ یعنی مسام‘بند ہو سکتا ہے ۔بند ہو جانے والے مسام میں بیکٹیریا کی ایک قسم جسے Propiono Bacterium Acnesکہتے ہیں اور جوکہ عام طور پر جلد کے اوپر رہتا ہے‘بند مسام کے اندر تیزی سے پرورش پا سکتا ہے ۔

اس انفیکشن کی وجہ سے سوزش پیدا ہوتی ہے جو دھبے کے سرخ ہو جانے اور سوج جانے کا سبب بنتی ہے ۔بعض اوقات شدید قسم کے مہاسوں کی صورت میں ایک مسام کے اندر سوزش کی جگہ پھٹ سکتی ہے جس سے جلد کو نقصان پہنچ سکتا ہے اور نشانات پڑ سکتے ہیں ۔بعض اقسام کی ادویات جیسے اسٹیرائیڈ ٹیبلٹس اور بعض کاسمیٹکس جو مسام کا راستہ بند کرتے ہیں‘مہاسوں کی شدت میں اضافہ کر سکتے ہیں۔


دھبے
مہاسے مختلف قسم کے داغ دھبوں کا سبب بن سکتے ہیں۔جن لوگوں کے مہاسے نکلتے ہیں‘و ہ بلیک ہیڈس(Black Heads)کا شکار ہو سکتے ہیں ۔یہ مساموں کے بند ہو جانے کی وجہ سے پیدا ہوتے ہیں جو جلد کے بہت زیادہ Pigmentation کے ذریعے اپنا سیاہ رنگ حاصل کرتے ہیں ۔وائٹ ہیڈس(White Heads)بھی عام ہیں۔یہ جلد کی سطح کے نزدیک اس وقت ظاہر ہوتے ہیں جب گڑھے کے اندر بہت زیادہ سیبم جمع ہو جاتا ہے ۔

Sebaceousغدود بھی انفیکشن کا شکار ہو سکتے ہیں ۔زیادہ سنگین نوعیت کے سوزشی مہاسوں میں جلد کی سطح کے نیچے Cystsپیدا ہو جاتے ہیں۔مہاسوں کے یہ Cystsپھٹ سکتے ہیں اور جلد کے قریبی ٹشو میں انفیکشن پھیلا سکتے ہیں ۔اس کے نتیجے میں نشانات پڑ سکتے ہیں۔مہاسے جذبانی صدمے کا سبب بن سکتے ہیں لیکن اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے بہت سے طریق ہائے علاج موجود ہیں۔


گھریلو علاج
یہ ضروری ہے کہ دھبے والی جگہ کو بالکل صاف رکھا جائے ۔اس غرض سے جلد کے متاثرہ حصے کو خوشبودار کلینسرسے دن میں دو دفعہ دھوئیے۔
اینٹی بیکٹیریل فیس واشز(Anti-Bacterial Face Washes)اور صابن بھی موجود ہیں جو کہ خاص طور سے چکنی جلد کے لئے ہوتے ہیں ۔ہماری جلد کو تیل کی ایک خاص مقدار کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ وہ اپنی قدرتی حالت کو بر قرار رکھ سکے۔

اس لئے تیز قسم کے صابنوں سے رگڑ رگڑ کر منہ دھونے سے گریز کیجئے۔
داغ کی جگہ کو نوچنے کی کوشش مت کیجئے۔اس جگہ پر زیادہ نوچ کھسوٹ کرنے سے نشانات پڑ سکتے ہیں۔گرمی کے موسم میں مہاسوں کی شدت میں کچھ کمی آجاتی ہے ۔اس کی وجہ دھوپ ہو سکتی ہے‘کیونکہ دھوپ جلد کو خشک کرتی رہتی ہے۔مہاسوں کا کوئی بھی علاج ایسا نہیں ہے جو فوری طور پر اپنا اثر دکھانا شروع کردے۔

علاج کے موثر ہونے میں اگر مہینے نہیں تو ہفتے تو لگ ہی سکتے ہیں ۔تب کہیں جا کر صحت یابی کی علامات نظر آتی ہیں۔
انڈے کی سفیدی میں بھگویا ہوا کاٹن وول بلیک ہیڈس کے لئے
کاٹن وول کے ایک بڑے سے ٹکڑے کو انڈے کی سفیدی میں بھگو لیجئے۔متاثرہ حصے کو اس کاٹن وول سے ڈھانپ لیجئے اور اسے مکمل طور پر سوکھنے اور خشک ہونے دیجئے۔

سوکھے ہوئے کاٹن وول کو احتیاط کے ساتھ علیحدہ کیجئے۔اگر قسمت آپ کا ساتھ دے تو بلیک ہیڈس کاٹن وول میں چپک جائیں گے اور اس کے ساتھ ہی باہر آجائیں گے۔
بلیک ہیڈس کے علاج کے لئے چینی مٹی کا استعمال۔
دوچائے کے چمچے بھر کر چینی مٹی کا لیپ بنائیے۔لیپ ایسا ہونا چاہئے جوجلد پر آسانی کے ساتھ پھیل جائے۔پھر اس لیپ کو جلد کے متاثرہ حصے پر لگائیے۔

اس کو خشک ہونے اور پوری طرح سے سوکھنے دیجئے۔
مکمل طور سے خشک ہوجانے اور سوکھ جانے کے بعد اس مٹی کو ٹکڑوں کی شکل میں الگ کرلیجئے۔
بلیک ہیڈس کو مٹی کے ان ٹکڑوں کے ساتھ ہی باہر آجانا چاہئے۔
نسخوں کے بغیر علاج
ایسے لوشنز جن میں Benzoyl Peroxideموجود ہوتا ہے ‘جلد کو خشک کرنے میں اور مردہ جلد کی سطح کی تہ کو جھاڑ کر الگ کر دینے میں مدد دیتے ہیں۔

Benzoyl Peroxideاپنے اندر Anti-Bacterialعمل کی صلاحیت رکھتاہے۔
نسخوں والی ادویات
اگر آپ شدید قسم کے مہاسوں کی شکار ہیں تو اس کے لئے بہت سے دوسرے علاج موجود ہیں جن میں یا تو جلد پر ملنے والی اشیاء شامل ہیں اور کھانے والی ٹکیاں۔
لگائی جانے والی ادویات
Azelaic Acidایک ایسا کیمیاوی مادہ ہے جسے Benzoyl Peroxideکی جگہ استعمال کیا جا سکتا ہے جو جلد میں قدرے سوزش پیدا کر سکتا ہے۔


ایسے مرہم جن میں وٹامن اے شامل ہو‘جلد پر روزانہ ایک یا دوبار ملے جاتے ہیں۔ جلد پر لگائے جانے والے ایک اینٹی بایوٹک لوشن کو Propiono Bacteriumکو کنٹرول کرنے کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے ۔اس علاج کو تقریباً چھ ماہ تک جاری رکھا جانا چاہئے۔
کھانے والی دواؤں کے ذریعے علاج
سوزش والے مہاسوں کے لئے کھانے والی اینٹی بایوٹکس تجویز کی جاسکتی ہیں۔

ہارمون کا علاج۔ڈیا نیٹ(Dianette)نامی گولی میں ایک دواشامل ہوتی ہے جسےCyperoterone Acetateکہتے ہیں ۔یہ دوا سر کو لیشن میں مردانہ ہارمونز کی تعداد کو گھٹا دیتی ہے اور یہ مہاسوں کا ایک موثر علاج فراہم کر سکتی ہے۔Isotretinoinبھی ایک کھانے والی دوا ہے ۔لیکن اسے صرف اسپتال کے ماہرین ہی تجویز کر سکتے ہیں۔
گھریلو احتیاط
صابن کے بجائے بیسن استعمال کیجئے ۔

بیسن کو دودھ میں یا چاول کے پانی میں ملا لیجئے۔اس لیپ کو جسم پر لگائیے۔صاف پانی سے مل کر دھوڈالئے۔ رنگت (Complextion)کے ماسک۔ایک لیپ تیار کیجئے۔جس میں ایک چٹکی ہلدی‘ایک بڑا چمچہ دودھ کا پاؤڈر‘دو بڑے چمچے شہداور آدھے لیمبو کا رس شامل ہو ۔ان ساری چیزوں کو آپس میں اچھی طرح سے ملا لیجئے۔اس کو اپنے چہرے پر اس وقت تک ملئے جب تک کہ یہ خشک نہ ہو جائے ۔

اپنے چہرے کو دھو ڈالئے اور آپ واضح فرق محسوس کریں گی۔
بلیک ہیڈس اور مہاسوں کے داغوں کے لئے ہلدی کی گانٹھوں اور سرسوں کے بیجوں کو پیس کر ان کا لیپ تیار کیجئے اور روزانہ رات کو اسے دھبوں پر لگائیے۔دھبے کی جگہ کو پانی سے دھوڈالئے اور نشانات برابر غائب ہوتے چلے جائیں گے۔
دیگر نسخے
دہی جلد کے مساج کے لئے بہترین شے ہے کیونکہ یہ خشک اور روغنی ‘دونوں قسم کی جلد کوٹون کر سکتاہے۔


ایک گلاس لائم جوس میں وٹامن سی کی اتنی مقدار شامل ہوتی ہے جو جلد کے رنگ کو بہتر بنا سکتی ہے۔
سفید مولی اور گاجر کارس اگر بہت زیادہ مقدار میں استعمال کیا جائے تو اس سے جلد کے عمدہ ٹیکسچر کے لئے ضروری وٹامن اے حاصل ہوتا ہے ۔
شہد میں وٹامن کمپلیکس شامل ہوتا ہے جو کہ جلد کے اچھے رنگ کے لئے فی الحقیقت بڑی اہمیت رکھتا ہے ۔کھیرے‘پیاز اور میتھی کے استعمال سے بھی رنگت بہتر ہوتی ہے۔


دانوں پر کافور کی اسپرٹ لگائیے۔یہ اس وقت تک لگاتی رہئے جب تک کہ دانے خشک نہ ہو جائیں۔
اس کی وجہ سے جلن ہو سکتی ہے لیکن اسے برداشت کیجئے۔یہ انفیکشن کوروکے گی۔
چہرے کو صاف کرنے کے کئی طریقے ہیں۔اس کے لئے جو چیزیں استعمال کی جاسکتی ہیں ان میں صابن‘جیل‘کریمیں‘فیس واشز اور ہربل پروڈکٹ یعنی جڑی بوٹیوں سے بنی ہوئی اشیاء شامل ہیں۔

جڑی بوٹیوں سے بنی ہوئی بعض ادویات اور کریمیں اور فیس ماسک وغیرہ جلد پر سے دھبوں اور نشانات وغیرہ کو صاف کرنے میں مدد دیتی ہیں۔
اور آخری بات یہ کہ کون سی چیز آپ کی جلد کے لیے سب سے زیادہ فائدہ مند ہو سکتی ہے ۔اس کا فیصلہ سب سے زیادہ بہتر طور پر آپ خود ہی کر سکتی ہیں۔چنانچہ آپ خود اپنی جلد کا تجزیہ کیجئے اور اس کے لئے بہترین علاج کا انتخاب کیجئے۔یہ آپ کے اپنے ہاتھ میں ہے کہ آپ کا چہرہ ہمیشہ روشن‘تابناک اور خوبصورت نظر آئے۔ تو بس پھر ہمت کیجئے۔سمجھ بوجھ سے کام لیجئے اور اعتماد کے ساتھ دنیا کا سامنا کیجئے۔

تاریخ اشاعت: 2019-06-12

Your Thoughts and Comments

Special Face Care & Skin Care article for women, read "Chehre K Daagh Dhabbe Khobsorat Jild Main Rukawat" and dozens of other articles for women in Urdu to change the way they live life. Read interesting tips & Suggestions in UrduPoint women section.