Waxing K Baad Alergy Aur Mahason Se Bachao

ویکسنگ کے بعد الرجی اور مہاسوں سے بچاؤ

Waxing K Baad Alergy Aur Mahason Se Bachao
ویکسنگ کے بعد اکثر جلد پر دھبے پڑجاتے ہیں جن میں خارش اور بے چینی ہوتی ہے۔ اور ہمارے لیے تکلیف کاباعث بن جاتے ہیں ۔ ان سے نجات حاصل کرنے کے بہت سے طریقے ہیں۔ یہ وقت کے ساتھ ساتھ ہلکے ہوتے جاتے ہیں لیکن بعض اوقات یہی تکلیف دہ ثابت ہوتے ہیں اگر ان کا خیال نہ کیا جائے تویہ کافی حد تک بڑھ جاتے ہیں ۔
اکثر عورتوں کی جلد پر ویکسنگ کے بعد مہاسے ہوجاتے ہیں جن کا خیال نہ کیاجائے تو اس کا سنبھالا مشکل ہوجاتا ہے۔

مہاسے یاالرجی ہوجانے کے بعد واحد حل ان کا علان ہے۔ لیکن پہلے سے احتیاطی تدابیر کرکے ان سے بچاجاسکتا ہے ۔
جلد کود ھویا جائے :
ویکسنگ کرنے کے بعد چہرے کو کسی اچھے کلینزر سے نرمی کے ساتھ صاف کرکے دھوئیں۔ تیز صابن یا اسکرب ہرگزاستعمال نہ کریں ۔

(جاری ہے)


ڈھانپ کررکھیں :
ویکسنگ کی ہوئی جلد کو کاٹن کے کپڑے سے ڈھانپ کررکھیں تاکہ جلدکو دھول مٹی سے بچایاجاسکے ۔

#
موائسچرائزر:
متاثرہ جلد پر موئسچرائزنگ کریم یالوشن لگائیں تاکہ جلد کی سوجن ختم ہوجائے ۔
مہاسوں سے بچنے کے طریقے :
جلد کو مہاسوں سے بچانے کے طریقے اختیار کرکے آپ اس بڑی کوفت سے بچ سکتے ہیں۔
ماہواری کے دوران ویکسنگ نہ کریں :
ماہواری کے دنوں میں جلد زیادہ حساس ہوجاتی ہے ۔ جس کی وجہ سے ویکس کرنے سے جلد پر مہاسے یا سرخی آجاتی ہے۔

اس لیے جہاں تک ممکن ہوان دنوں میں ویکسنگ نہ کی جائے ۔
دوا کااستعمال :
اگر آپ کوئی دواکھاتی ہیں تومہاسوں سے بچنے کے لیے ویکس کرانے سے گریزکریں۔ کیونکہ دواؤں اور ویکس کاری۔ ایکشن ہوسکتا ہے جس کی وجہ سے مہاسے نکلنے کااندیشہ ہوتا ہے۔ دوا کے استعمال کے چھ ماہ بعد ویکس کراسکتے ہیں ۔
ایک ساتھ دوچیزیں نہ کریں :
جلد کو اسکرب کرنے کے فوراََ بعد ویکس نہ کریں کیونکہ اسکرب کے بعد جلد کو اوپری سطح حساس ہوجاتی ہے جس پرگرم ویکس لگنے سے مہاسے ابھرآتے ہیں۔


ویکسنگ سے پہلے :
چہرے کو نیم گرم پانی سے اچھی طرح دھوئیں تاکہ میک اپ اور چکنائی بالکل صاف ہوجائے اور مسام کھل جائیں ۔ پھر کلینزر سے صاف کرکے جلد کو خشک کرلیں ۔
ویکسنگ کے بعد :
ویکسنگ کے بعددوبارہ کلینزر سے صاف کرلیں خیال رہے کہ آپ کے ہاتھ صاف ہوں کیونکہ گندی انگلیاں اور جلد کا قدرتی تیل مسام کو بند کرکے مہاسوں کا باعث بن سکتا ہے ۔
ویکسنگ کے بعد جلد پر کوئی آئل یاکریم نہ لگائیں ۔ کیونکہ جلد کے مسام کافی کھلے ہوتے ہیں اور بیکٹیریا کی آماجگاہ بن سکتے ہیں۔ اس لیے کریم یاآئل کے بجائے ایلوویرالوشن یاجیل لگائیں تاکہ جلد کی جلن سے نجات مل سکے۔
تاریخ اشاعت: 2016-10-21

Your Thoughts and Comments

Special Skin Care article for women, read "Waxing K Baad Alergy Aur Mahason Se Bachao" and dozens of other articles for women in Urdu to change the way they live life. Read interesting tips & Suggestions in UrduPoint women section.