Mitti Mein Khubsurti Ka Raaz Poshida Hai - New Trends Of Beauty

مٹی میں خوبصورتی کا راز پوشیدہ ہے - خوبصورتی کے نئے انداز

ہفتہ 7 مئی 2022

Mitti Mein Khubsurti Ka Raaz Poshida Hai
آج ہماری فضا پہلے جیسی صاف نہیں رہی کئی قسم کی آلودگی فضا میں شامل ہو گئی ہے۔یہ آلودگی جلد کو بھی تیزی سے متاثر کر رہی ہے۔خصوصاً وہ خواتین اور لڑکیاں جو صبح گھر سے نکلتی ہیں اور دوپہر یا شام میں واپس آتی ہیں۔ایسی خواتین اور لڑکیوں کی جلد دھول مٹی اور فضائی آلودگی سے زیادہ متاثر ہوتی ہے۔ایک جانب تو ان کی رنگت خراب ہونے لگتی ہے تو دوسری جانب ان کے چہرے پر کیل مہاسے ڈیرا جمانے کی کوشش کرتے ہیں اس مشکل صورت حال سے نجات کے لئے مٹی کے مختلف ماسک کے ذریعے جلد کی خوب صورتی برقرار رکھنے کی کوشش کی ہے۔


موسم میں تبدیلی،فضائی آلودگی اور مضر صحت غذاؤں کے منفی اثرات سب سے پہلے چہرے پر آتے ہیں جس کے نتیجے میں چہرے پر دانے،ایکنی،کیل مہاسے اور اُن کے سبب بد نما داغ دھبے بننے لگتے ہیں۔

(جاری ہے)

جلد کے ان مسائل سے آسانی اور بغیر بھاری بھرکم خرچ کے جان چھڑائی جا سکتی ہے۔
ملتانی مٹی کا استعمال قدیم زمانے سے چلا آ رہا ہے،خواتین چہرے کی خوب صورتی بڑھانے کے لئے اس کا استعمال اپنے چہرے سمیت بالوں پر بھی کرتی ہیں جس کے بہت اچھے نتائج حاصل ہوتے ہیں۔


ملتانی مٹی
ملتانی مٹی کو بجا طور پر ایک ایسی قدرتی نعمت گردانا جا سکتا ہے جسے قدرت نے خصوصی طور پر جلد کی حفاظت کے لئے تخلیق کیا ہے۔زمانہ قدیم سے خواتین ملتانی مٹی،چہرے کی صفائی کے لئے استعمال کر رہی ہیں،آج بھی دیہی علاقوں میں ملتانی مٹی کو اس حوالے سے خصوصی اہمیت حاصل ہے۔آج کے ترقی یافتہ دور میں بھی جلدی بیماریوں سے محفوظ رہنے کے لئے ملتانی مٹی بہت اہتمام سے استعمال کی جاتی ہے۔

ملتانی مٹی کا سائنسی نام کیلشیم بینسٹونائٹ Calcium Bentonite ہے۔اسے فُلرز ارتھ کلے Fuller'S Earth Clay بھی کہا جاتا ہے،ملتانی مٹی منرلز سے بھرپور ہوتی ہے جسے صدیوں سے جلدی امراض کے لئے استعمال کیا جا رہا ہے۔میگنیشیم کلورائیڈ کی بھرپور مقدار پائے جانے کے سبب یہ جلد کے اندر تک جا کر صفائی کرتی ہے،اضافی چکناہٹ سے نجات دلاتی ہے،بلیک اور وائٹ ہیڈز کا خاتمہ کرتی ہے اور جلد کے کھلے ہوئے مساموں کو بند کرتی ہے۔

اس کے نتیجے میں جلد دانے،داغ دھبوں سے پاک،صاف ستھری،شفاف نظر آتی ہے۔ملتانی مٹی کو عام طور پر گھیکوار،عرقِ گلاب،انڈے کی سفیدی،روغنِ بادام،شہد،لیموں کا عرق،کینو کے خشک چھلکوں کا پاؤڈر،بیسن یا دیگر اشیاء وغیرہ مختلف مقداروں میں شامل کرکے ایک اچھا موزوں اور نیچرل ماسک تیار کیا جاتا ہے۔جلد کی نوعیت کے مطابق خواتین ملتانی مٹی سے مستفید ہو سکتی ہیں۔

عام تاثر ہے کہ یہ مٹی محض چکنی جلد کے لئے ہی مفید ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ تمام اقسام کی جلد پر ملتانی مٹی کے بازار میں جلد کی مناسبت سے مختلف قدرتی اجزاء سے بنے ہوئے ماسک دستیاب ہیں لیکن گھر میں بھی اپنی جلدی ضرورت کے مطابق مطلوبہ اجزاء ملا کر ملتانی مٹی کا ماسک باآسانی تیار کیا جا سکتا ہے۔
چکنی جلد کے لئے
ملتانی مٹی چکنی جلد کی خواتین کے لئے آئیڈیل ماسک کا درجہ رکھتی ہے کیونکہ چکنی جلد کی خواتین کے لئے خشک اشیاء اس میں تیل جذب کرنے کی صلاحیت زیادہ ہے جس کے باعث وہ جلد سے اضافی چکنائی کو دور کر دیتی ہے۔

چکنی جلد کے لئے ملتانی مٹی کے ساتھ ایلو ویرا،لیموں کا عرق،انڈے کی سفیدی،صندل کی لکڑی،کینو کے چھلکوں کا پاؤڈر ملا کر ماسک بنایا جا سکتا ہے۔گرمیوں میں چکنی جلد کی حامل خواتین اگر ملتانی مٹی میں عرق گلاب،لیموں کا عرق یا کھیرے کا عرق شامل کرکے بطور ماسک ہفتے میں دو بار استعمال کریں تو اس ماسک سے چہرے کی فالتو چکنائی ختم ہو گی اور دانوں و کیل مہاسوں میں بھی افاقہ ہو گا۔

چکنی جلد سب سے زیادہ کیل مہاسوں سے متاثر ہوتی ہے۔ملتانی مٹی جلد کے قدرتی تیل کی افزائش کو متوازن رکھتی ہے۔ملتانی مٹی میں لیموں کے رس کے علاوہ کھیرے کا رس،انڈے کی سفیدی اور کینوں کے چھلکوں کا پاؤڈر شامل کرکے بھی ماسک سے خصوصی فوائد حاصل کیے جا سکتے ہیں۔چکنی جلد سے اضافی چکناہٹ اور کیل مہاسوں کے خاتمے کے لئے ایلو ویرا یا لیموں کا عرق،ملتانی مٹی،انڈے کی سفیدی،صندل لکڑی کا برادہ،کینو کے خشک چھلکوں کا سفوف لے لیں،ان سب اجزاء کو یک جان ملائیں اور چہرے پر لگا لیں اور 20 سے 25 منٹ کے لئے سکون سے لیٹ جائیں،جلد کو پرسکون وقت دیں،سوکھنے پر چہرہ دھو لیں۔

ایک پیالی میں انڈا توڑ کر سفیدی نکال لیں زردی الگ کر دیں سفیدی میں چند قطرے لیموں کے عرق کے ملا لیں پھر چمچ کی مدد سے اتنا پھینٹیں کہ پیالی میں جھاگ بن جائے اب اسے چہرے پر لگائیں۔جب خشک ہو جائے تو ٹھنڈے پانی سے چہرہ دھو لیں۔
خشک جلد کے لئے
خشک جلد کے لئے ملتانی مٹی،کچا دودھ،چند قطرے زیتون کا تیل،صندل کی لکڑی کا پاؤڈر اور کینو کے خشک چھلکوں کا پاؤڈر حسب ضرورت لے لیں،اب ان سب اجزاء کو کانچ کے برتن میں عرق گلاب کی مدد سے مکس کر لیں اور 20 سے 25 منٹ کے لئے چہرے پر لگا لیں۔

خشک جلد کے لئے ملتانی مٹی کو پیس کر اس میں تھوڑی سی پسی ہوئی ہلدی ملا لیں ساتھ ہی چند قطرے روغن بادام کے ڈال کر پیسٹ بنا لیں پیسٹ نرم ہونا ضروری ہے چہرے پر لگا کر پندرہ منٹ کے لئے چھوڑ دیں پھر چہرہ دھو لیں۔اس پیسٹ کے استعمال سے چہرہ دن بدن نکھرتا چلا جائے گا۔خشک جلد کے لئے ملتانی مٹی میں بادام،زیتون یا صندل کا تیل ملا کر استعمال کیا جا سکتا ہے،خشک جلد پر ملتانی مٹی کے ماسک سے قبل ٹھنڈے دودھ سے ٹکور بھی کی جانی چاہیے تاکہ کھلے مسام بند ہو جائیں۔


نارمل جلد
نارمل جلد کے لئے ملتانی مٹی کو خالص اور سادہ شکل میں بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔موسم کی مناسبت سے عرق گلاب،گاجر کا رس اور دودھ کی بالائی بھی ملتانی مٹی میں شامل کی جاتی ہے۔کھیرے یا گاجر کا رس لیں،ملتانی مٹی،صندل کا برادہ،کینو کے خشک چھلکوں کا سفوف،ان سب اجزاء کو مکس کر لیں اور چہرے پر لگا لیں۔ایک حصہ خشک پاؤڈر دودھ اور ایک حصہ کچی ملتانی مٹی کا لے کر اس میں زیتون کا تیل ملا لیں اس طرح نرم انداز کا پیسٹ تیار ہو جائے گا۔اب اسے چہرے پر لگا کر پندرہ منٹ انتظار کریں پھر اُتار کر منہ دھو لیں نارمل جلد کے لئے بہترین ماسک ثابت ہو گا۔
تاریخ اشاعت: 2022-05-07

Your Thoughts and Comments

Special New Trends Of Beauty article for women, read "Mitti Mein Khubsurti Ka Raaz Poshida Hai" and dozens of other articles for women in Urdu to change the way they live life. Read interesting tips & Suggestions in UrduPoint women section.