Nakhuno Ki Hifazat Or Safai

ناخنوں کی حفاظت اور صفائی

ہفتہ نومبر

Nakhuno Ki Hifazat Or Safai

اگر ناخنوں کی دیکھ بھال اور صفائی باقاعدہ نہ کی جائے تو وہ کھردرے ،خراب اور بد شکل ہو جاتے ہیں۔جب لاپروائی اور احتیاطی سے ناخنوں کی ایسی حالت ہو جائے تو ان کو صاف ستھرا رکھنے کی پوری کوشش کی جائے۔پہلے تو ان کو داغ دھبے دور کرنے والی پالش میں روئی کا پھایا ترکر کے ناخنوں سے پہلے لگا ہوارنگ دور کر دیا جائے،جونئی تہذیب کے مطابق خوش نمائی کیلئے لگایا جاتاہے۔

یا پرانے رسم ورواج کے مطابق مہندی لگانے سے ہاتھوں اور ناخنوں کو رنگین کر لیا جاتاہے۔رنگ دور کرکے ناخنوں کو اچھی طرح رگڑ اور مل دیا جائے۔پھر کسی تیز ناخن گیر یا نیل کٹر سے انہیں گول کاٹ دیا جائے۔مگر اس میں احتیاط رکھی جائے کہ ناخن دونوں طرف سے زیادہ گہرے کاٹے یا کھر درے نہ ہو جائیں ورنہ بد نما ہو جاتے ہیں ۔

(جاری ہے)


انگلیوں کے سروں یعنی ناخن والے پوروں کو روزانہ تین منٹ تک صابن ملے نیم گرم پانی میں ڈبوئے رکھنا چاہیے۔

اس عمل میں ناخن اچھی طرح صاف ہو جاتے ہیں۔اور ناخن کی جڑ پر جھلی کی طرح جو کھال ہوتی ہے وہ نرم وملائم ہو جاتی ہے اس کے بعد انگلیوں کو خشک کر لینا چاہیے۔اور ملائم شدہ کھال کو تولیہ سے آہستہ آہستہ ہٹا دینا چاہیے۔کیونکہ وہ پانی میں تر ہونے کی وجہ سے پھول جاتی ہے۔اگر غسل کے بعد روزانہ یہ عمل کیا جائے تو ناخن کی جڑ کی طرف کی جھلی جو کہیں سے پھٹ کر تکلیف پہنچاتی ہے اور ہاتھوں کی خوبصورتی کی دشمن ہوتی ہے اس سے نجات حاصل ہو جائے گی۔

کسی چھوٹی لکڑی کے سرے پر روئی کا پھا یا لپیٹ کر تمام طرف سے ناخنوں کو صاف کرلینا چاہیے۔
ناخنوں پر ان کی جڑ سے کناروں تک اور کناروں سے نچلے حصے کی طرف پالش کا ایک ہلکا لیپ لگا یا جائے۔ہر ناخن پر ہلکا لیپ کرنے کیلئے برش کو ہرد فعہ وارنش میں ہلکا تر کر لینا چاہیے۔اگر وارنش زیادہ لگ جائے تو برش کے بالوں کو شیشی کے کناروں سے رگڑ کر کم کر دینا چاہیے۔

اس طرح ناخنوں پر پالش کاایک ہموار اور صاف لیپ ہوجائے گا۔اور پالش اِدھر اُدھر نہیں پھیلے گا چار پانچ منٹ تک یہ پہلی تہہ خشک ہو جائے گی۔اس کے بعد دوسری تہہ لگائی جائے اگر ناخن ساخت کے اعتبار سے چوڑے ہوں تو انہیں ہر طرف سے ایک باریک خط کے برابر پالش کی تہہ کیے بغیر چھوڑدیا جائے اس عمل سے ناخن چوڑے نہیں معلوم ہوں گے ناخن کے جڑ سے ملا ہوا سفیدرنگ کا جو گول اور چھوٹا دائرہ ہوتاہے اسے وارنش کے بغیر نہ چھوڑا جائے ورنہ ناخنوں کی چوڑائی نمایاں ہونے لگتی ہے اور وہ چھوٹے دکھائی دینے لگتے ہیں۔

اگر ان ہدایتوں کے مطابق باقاعدہ ناخنوں کی دیکھ بھال اور صفائی وغیرہ کی جائے تو وہ نہایت صاف ستھرے اور خوش نماہو جاتے ہیں ۔اور اس عمل کیلئے روزانہ نصف گھنٹے سے بھی کم وقت خرچ ہوتاہے۔

تاریخ اشاعت: 2019-11-30

Your Thoughts and Comments

Special Nail Care Tips For Health & Strong Nails article for women, read "Nakhuno Ki Hifazat Or Safai" and dozens of other articles for women in Urdu to change the way they live life. Read interesting tips & Suggestions in UrduPoint women section.