اگلا صفحہ پچھلا صفحہ

"بجلی کا بحران، عوام پریشان" پر مزید کوریج

آئی ایم ایف کے قرضے ملک و قوم کے مفاد میں نہیں ہیں‘سینیٹر حاجی الیاس احمد بلور،وفاق کا سرحد سے 4 روپے فی یونٹ بجلی لے کر اسے دوبارہ سرحد کو 10 روپے فی یونٹ فروخت کرنا ظلم ہے ‘صنعتکاروں سے خطاب:
صوابی(اُردو پوائنٹ تازہ ترین۔ 20نومبر 2008 ء)بزنس مین فورم پاکستان کے لیڈر سینیٹر حاجی الیاس احمد بلور نے کہا ہے کہ صوبہ سرحد میں دہشت گردی اور اس کے نتیجے میں موجودہ حالات کی وجہ سے صوبہ سرحد میں صنعتیں مشکل حالات سے گزر رہے ہیں وہ سرحد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سالانہ انتخابات کے سلسلے میں سرحد ٹیکسٹائل ملز گدون صنعتی بستی میں گدون چیمبر کے ممبران اور صنعتکاروں سے خطاب کررہے تھے جس سے سابق صدر سرحد چیمبر لیاقت احمد خان ‘محمد آصف خان صدر سرحد چیمبر سابق صدر گدون چیمبر پرویز عمر خان‘زاہد شنواری‘ محمد انور خان اور صدر گدون چیمبر فضل آمین نے بھی خطاب کیا-اس موقع پر سرحد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے بزنس کمیونٹی کے نامزد امیدواران برائے ایگزیکٹو کمیٹی انجنیئر مقصود انور پرویز‘احسن رشید گوڑواڑہ‘ محمد اسحاق‘کامران شفیع‘ ڈاکٹر محمد عمر زکوڑی‘ ملک افتخار احمد اعوان‘ محمد لقمان شاہ اور ریاض ارشد بھی موجود تھے سینیٹر الیاس احمد بلور نے کہا کہ میں نے بحیثیت سینیٹر ایوان بالامیں صوبے کے تمام صنعتی یونٹوں کے متعلق آواز بلند کی ہے اور اب بھی ایوان میں مسائل کے حل کیلئے جدوجہد جاری رکھوں گا انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ خدا را تباہی کے کنارے کھڑے سرحد کے صنعتوں کو بچانے کیلئے عملی اقدامات اٹھائے جائیں انہوں نے کہا کہ امریکہ‘برطانیہ اور بھارت میں صنعتوں کو ترقی دینے کیلئے مارک اپ کی شرح میں کمی رکھی ہے مگر پاکستان میں اس کی شرح 25فیصد تک انتہائی زیادتی ہے وفاقی وزیر خزانہ نے آئی ایم ایف کے قرضوں کے متعلق جو بات کی اس کی ہم نے ایوان ہی میں مخالفت کی کیونکہ آئی ایم ایف کے قرضے ملک و قوم کے مفاد میں نہیں ہیں اب پاکستان میں آئل‘سریا اور دیگر اشیاء کے نرخوں میں کمی کے باعث صنعتی تباہی کے دھانے پر پہنچ چکے ہیں انہوں نے کہا کہ وفاق کا سرحد سے 4 روپے فی یونٹ بجلی لے کر اسے دوبارہ سرحد کو 10 روپے فی یونٹ فروخت کرنا ظلم ہے- گدون کی صنعتی بستی کو پھیرر ہائیڈرل پراجیکٹ سے آٹھ میگاواٹ بجلی فراہم کرنے کے متعلق صوبائی حکومت سے بات کریں گے تاہم انہوں نے کہا کہ سرحد میں ایم ایم اے دور حکومت سے جن مشکلات کا سامنا ہے اس کی وجہ سے امن نہ ہونے سے صوبے کی صنعتوں کو مشکلات درپیش ہیں کیونکہ ایم ایم اے اپنے دور حکومت میں طالبان پال رکھے تھے جو اب موجودہ حکومت کیلئے مشکل ہے سوات میں ایم ایم اے حکومت نے آرمی طلب کی تھی جب صوبے میں امنہ و گا تب ملک آباد ہو گا صنعتیں چلیں گی صنعتکار صوبے میں سرمایہ کاری کریں گے انہوں نے کہا کہ سرحد چیمبر کے تمام نامزد ممبران نہایت قابل اور محنتی ہیں گدون کے صنعتکاروں نے ماضی میں بھی تعاون کیا ہے اور اب بھی کریں گے جس کے ہم مشکور ہیں-

20/11/2008 13:30:28 : وقت اشاعت
پچھلی خبر مركزی صفحہ اگلی خبر
تمام خبریں
یہ صفحہ اپنے احباب کو بھیجئیے
محفوظ کیجئے
پرنٹ کیجئے