Pia Ka Safar Taqwa Or Kifayat

پی آئی اے کا سفر، تقویٰ اورکفایت ہمرکاب ۔۔۔

سید عارف مصطفیٰ پیر فروری

Pia Ka Safar Taqwa Or Kifayat
ذرا بیان اس سفر کا بھی ہوجائے کہ جب میں چند روز قبل کراچی سے پی آئی اے کےہوائی چھکڑے المعروف ایئر بس پہ لد کر اسلام آباد پہنچا تھا‌‌ اور جب بھی کبھی اس سفر کا وہ ایک دلچسپ منظر یاد آتا ہے تو قہقہ سا نکل جاتا ہے کیونکہ میرے ساتھ بیٹھے شخص کو جب کھانا پیش کیا گیا اور اس نے سامنے کی نشست کی پشت میں لگی اپنی کھانے کی میز کو سیدھا کیا تو اسکے نیچے کے دو بریکٹوں میں سے ایک یعنی بائیں ہاتھ کی بریکٹ ٹوٹی پائی اور میز کی ٹرے لڑھکتی محسوس کی تو اس نےاس مسئلے کا فوری حل یہ نکالا کہ اسے نیچے سے جھٹ اپنی بڑی سی تندوری توند کا سہارا دیدیا تھا اور یوں اس مصالحانہ جگاڑ سے پی آئی اے ایک بڑے ' بحران' سے بچ گئی تھی ۔

۔ اور مجھے پہلی بار توند کا کوئی فائدہ بھی معلوم ہوا ۔

(جاری ہے)

۔۔ لیکن سب ہی مسافر تو مہیب توند کی دولت سے مالا مال نہیں ہواکرتے وہ اگرایسی سچویشن میں پھنستے تو بھلا کیا کرسکتے تھے سوائے اسکے کہ ٹوٹی میزبند واپس بند کرکے کھانے کو جھولی ہی میں بھر لیں اور جہاز ہی میں بیٹھے بیٹھے درگاہی لنگر کا مزہ پائیں

میں نےاس فلائٹ کو چھکڑے کا نام اس لیئے دیا کہ یہاں آدمی پہ آدمی چڑھا ہؤا تھا ( خدارا ذہن اور نیت کو صاف رکھیں) اور دائیں بائیں 3-3 نشستوں کے درمیان سے نکلتا راستہ اس قدر تنگ تھا کہ ذرا صحتمند آدمی اس میں سے گزرے تو باری باری اپنے دائیں بائیں کولہوں سے دونوں طرف کے کنارے کے مسافروں کودوستانہ سا تھپتھپائے بغیر آگے نہ جا پائے۔

۔ اس تنگ رستے کو دیکھ کے کراچی کی رنچھوڑ لائن یا پرانے لاہور کی گلیاں بے طرح یاد آتی تھیں جہاں سے جنازہ بھی اتنا ترچھا کرکے گزارا جاتا ہے کہ لگتا ہے آخرت کے مسافر کی یہیں زمین پہ پلٹائی مقصود ہے ۔۔۔ - -میری فلائٹ میں شاید مسافروں کے دھیان بھٹکنے اور لوگوں کو گمراہی سے بچانے کے لیئے ایئر ہوسٹسوں کو کچن کےدروازے ہی پہ روکے رکھا گیا تھا اور کھانے پینے کی تقسیم کے لیئے اسٹیوارڈ کی وردی میں ملبوس ایک ایسے مکمل اور ایک ادھورے گنجے کو چھوڑا گیا تھا کہ جنہیں دیکھ کر ہی بھوک اڑجاتی تھی اور ممکن ہے کہ یہ روح فرسا نظارہ کسی ایسے ہی سوچے سمجھے کفایتی اقدام کا حصہ رہا ہو ۔

۔۔اور شاید اسی لیئے کئی مسافروں نے کھانا لیا بھی نہیں ۔۔۔ انہی دو میں سے ایک اسٹیوارڈ نے سفر آغاز ہوتے ہی سیٹ بیلٹ باندھنے اور سیفٹی اقدامات کے بارے میں اک حفاظتی مجرا سا بھی پیش کیا لیکن مجال ہے کہ اس فرض شناس کی طرف کسی نے آنکھ اٹھا کر بھی جو ذرا دیکھا ہو ۔۔۔

حالانکہ لوگوں کی تسکین قلب کے لیئے پونے دوگھنٹے کا سفر ختم ہونے سے ذرا پہلے ایک ائرہوسٹس نما کوئی چہاڑ پہاڑ سی خاتون ذرا دیر کو اندر آئی بھی تھی لیکن اکثر لوگوں نے دل پکڑنے کے بجائے سر پکڑ لیئے کیونکہ اگر یہ فضائی بی بی کسی خرانٹ افسر کی اس سے بھی زیادہ خرانٹ پھپھو نہ معلوم ہورہی ہوتی تو بلاشبہ اسکی تازہ جنس کا تعین کرنا بھی دشوار تھا اور اس میں‌ کیا شک ہے کہ ایسا غیرجانبدار جغرافیہ رکھنے والی کوئی بھی خاتون عموما خطرات سے مامون ہی رہتی ہے- یہاں پیش کیئے گئے کھانے کے معیار کا معاملہ بھی نہ پوچھیئے ، بس چکن پلاؤ پکاتے پکاتے درمیان میں کفایت شعاری کا جذبہ آلو چاول پکوادے تو ویسا ہی کچھ بنا کرتا ہے کہ جیسا ہمیں کھا مرنے کو تھما دیا گیا تھا البتہ حاتم طائی کی قبر پہ لات مارت ہوئے کھانے کے ساتھ ٹشوضرور رکھا گیا تھا ۔

۔۔ خدشہ ہے کہ آے پی آئی اور خسارے میں گئی تو یہ ٹشو بھی نہ ملے گا بس کوئی اسٹوارڈ ہی آکر ایک تولیئے سے سب کے منہ پونچھ دیا کرے گا۔۔۔

Your Thoughts and Comments