Kabhi Uthaya Kabhi Bithaya - Puzzle No. 565

کبھی اٹھایا کبھی بٹھایا

kabhi uthaya kabhi bithaya

مزید پہیلیاں

لکھنے کا ہے ڈھنگ نرالا

Likhne Ka Hai Dhang Nirala

کوئی رنگ نہ بیل نہ بوٹے

Koi Rang Na Bale Na Booty

ذرا تھپک کر اسے اٹھایا

Zara Thapak Ke Usay Uthaya

دریا کوہ سمندر دیکھے

Darya Kohe Samandar Dekhe

ایک سمندر تیس جزیرے

Ek Samandar Tees Jazeera

اپنے منہ کو جب وہ کھولے

Apne Munh Ko Jab Wo Khole

اس کے ہوتے کچھ نہ کھایا

Uske Hote Kuch Na Khaya

سب کے دستر خوان پر آئے

Sab Ke Dasterkhan Per Aye

جس نے بھی وہ ساز بجایا

Jis Nay Bhi Woh Saaz Bajaya

رہتی ہے وہ ڈھیلی ڈھالی

Rehti Hai Wo Dheeli Dhali

یقینا وہ بزدل ہے جس نے بھی کھایا

Yaqeenan Wo Buzdil Hy Jis Ny Khaya

کچھ لمبا کچھ گول مٹول

Kuch Lamba Kuch Gol Matol

Your Thoughts and Comments