روس، کولمبین خاتون صحافی کو فٹ بال میچ کی لائیو کوریج کے دوران جنسی ہراسگی کا سامنا

نا معلوم شخص خاتون صحافی کو بانہوں میں بھر کر گال پر بوسہ دینے کے بعد فرار ہو گیا،خاتون صحافی نے فوری اشتعال سے گریز کرتے ہوئے اس منظر کو براہ راست نشر ہونے دیا

جمعرات جون 13:58

روس، کولمبین خاتون صحافی کو فٹ بال میچ کی لائیو کوریج کے دوران جنسی ..
ماسکو(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 21 جون2018ء) روس میں کولمبین خاتون صحافی کو فٹ بال میچ کی لائیو کوریج کے دوران جنسی ہراسگی کا سامنا کرنا پڑا،نا معلوم شخص خاتون صحافی کو بانہوں میں بھر کر گال پر بوسہ دینے کے بعد فرار ہو گیا،خاتون صحافی نے فوری اشتعال سے گریز کرتے ہوئے اس منظر کو براہ راست نشر ہونے دیا۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق روس میں جہاں فٹ بال ورلڈ کپ کا جوش وخروش پایا جا رہا ہے وہاں بعض ایسے واقعات بھی رونما ہو رہے ہیں جن سے تماشائیوں کی توجہ فٹ بال ورلڈ کپ کے بجائے دوسری جانب مبذول ہو رہی ہے۔

روس میں کھیل کھیل کے دوران ایک خاتون صحافی کے ساتھ دوران براہ راست نشریات ہراسانی کے واقعے نے سوشل میڈیا پر کہرام برپا کردیا۔تفصیلات کے مطابق کولمبیا کی ایک خاتون صحافی اور نامہ نگار جولیتھ گونزالیس تھیران فٹ بال مقابلے کی کوریج کر رہی تھیں کہ ایک شخص اس کے قریب آیا اور اس کے گال پر بوسہ دینے کے بعد فرار ہو گیا۔

(جاری ہے)

کولمبین نامہ نگارنے اس واقعے پرخود پر قابو رکھا اور فوری جذبات میں آنے اور مشتعل ہونے سے گریز کیا تاہم اسے ہراساں کرنے کا یہ منظر دنیا بھر میں براہ راست دیکھا گیا۔

یہ واقعہ گذشتہ جمعہ کو روس کے سارا نسک شہر میں پیش آیا۔ ایک نامعلوم شخص تیزی کے ساتھ خاتون نامہ نگار کے قریب آیا۔ اسے اپنی بانہوں میں لیا اور زور سے ایک بوسہ لینے کے بعد تیزی سے بھاگ گیا۔ہراسانی کا سامنا کرنے والی کولمبین نامہ نگار جرمن ریڈیو ڈوئچے ویلے سے منسلک ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ میں نے ریڈیو رپورٹ کے لیے براہ راست کوریج کی تیاری کی جب میں نے براہ راست رپورٹ پیش کرنا شروع کی تو موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ایک شخص اس کے قریب آیا اور اسے براہ راست ہراساں کیا۔

جولیتھ تھیران کا کہنا ہے کہ اس کے ساتھ جو ہوا وہ ناقابل برداشت ہے۔ ہم مردوں کے برابر پیشہ ورانہ امور انجام دیتے اور برابر کے حقوق کے مستحق ہیں۔ ہم سب اس وقت فٹ بال ورلڈ کپ کی جشن میں ہیں مگر ہمیں اپنے جشن کی حدود کا تعین کرتے ہوئے ایک دوسرے کی عزت واحترام کا بھی خیال رکھنا چاہیے۔