انسداد پولیو مہم میں ڈاکٹرز اورعملہ کی عدم دلچسپی کے خلاف انتہائی سخت تادیبی کارروائی عمل میں لائی جائے گی، ڈویژنل کمشنر ڈاکٹرسعید احمد منگنیجو

پیر اپریل 21:18

حیدرآباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 اپریل2018ء) سرکاری عملہ پولیو مہم کے معاملہ میں اپنا قبلہ درست کر لے، لاپرواہی وکوتاہی کی سزا اب صرف تبادلہ نہیں ہوگی، سرکاری ڈاکٹرزاورعملہ کی کام میں عدم دلچسپی کے خلاف انتہائی سخت تادیبی کارروائی عمل میں لائی جائے گی، شہری علاقوں میں پولیوکے قطرے نہ پلانے ،رہ جانے اور ٹیم کے نہ پہنچنے کی شکایات تشویش کا باعث ہوں گی۔

ان خیالات کا اظہارڈویژنل کمشنرحیدرآباد ڈاکٹرسعید احمد منگنیجو نے شہباز بلڈنگ میں پولیو کے خاتمہ کے حوالے سے منعقدہ حیدرآبادٹاسک فورس کے ایک اہم اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں حیدرآبادڈویژن کے تمام ڈپٹی کمشنرز، محکمہ صحت کے ضلعی افسران،عالمی ادارہ صحت، یونیسیف اور دیگرغیرسرکاری اداروں کے نمائندوں سمیت ایڈیشنل کمشنرسالک مرزا اوراسسٹنٹ کمشنر (ہیڈکواٹر)محمد عاصم نے بھی شرکت کی۔

(جاری ہے)

اس موقع پر ڈویژنل کمشنر حیدرآباد کو تمام اضلاع کی کارکردگی اورمسائل کے حوالے تفصیلی ملٹی میڈیابریفنگ بھی دی گئی۔ کمشنر حیدرآباد ڈاکٹرسعید احمد منگنیجو نے ضلعی انتظامیہ کو سختی سے ہدایات دیں کہ 7مئی سے شروع ہونے والی انسداد پولیو مہم اوراس کے حوالے سے آئندہ ہونے والے اجلاس سے قبل انتظامی مسائل حل کرلیں اورہر ڈپٹی کمشنر پولیو مہم کے حوالے سے اپنے ضلع کی انفرادی رپورٹ تیار کرکے پیش کرے۔

انہوں نے کہا کہ پولیو کے جڑ سے خاتمے کے لیے وفاقی اور صوبائی حکومت بہت سنجیدہ ہیں اور اس حوالے سے ملکی اور غیرملکی فلاحی تنظیموں کے ساتھ مل کر پولیو کے خاتمے کے لیے غیر معمولی اقدامات کررہی ہیں،حیدرآباد ڈویژن کے تمام اضلاع میں انسداد پولیو مہم کے انتظامات مجموعی طور پرتسلی بخش ضرور ہیں البتہ کچھ اضلاع حیدرآباد، مٹیاری، بدین اورسجاول کی کچھ یونین کونسلز میں پولیو مہم کے حوالے سے مزید بہتر اور غیر معمولی اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔

اس موقع پر انہوں نے پولیو مہم کے دوران بہترین کارکردگی ،نتائج اوراہداف حاصل کرنے والے اضلاع ٹنڈوالہیار،ٹھٹھہ اور ٹنڈومحمدخان کے ڈپٹی کمشنرز اورضلعی انتظامیہ کی حوصلہ افزائی کی اور انہیں ہدایت دیں کہ اس روایت کو برقرار رکھیں۔

متعلقہ عنوان :