Mirza Adeeb - Article No. 1960

میرزا ادیب

انھوں نے زندگی کے عام کرداروں کو ڈرامائی کرداروں کا درجہ دیا

بدھ اپریل

Mirza Adeeb
عائشہ کشف،فیصل آباد
میرزا ادیب کا اصلی نام دلاور علی ہے۔وہ 14 اپریل 1914ء کو پیدا ہوئے۔1931ء میں اسلامیہ ہائی اسکول،بھاٹی گیٹ سے میٹرک کرنے کے بعد انھوں نے 1935ء میں اسلامیہ کالج لاہور سے بی۔اے آنرز کیا۔

میرزا ادیب کی ادبی زندگی کا آغاز 1936 ء سے ہوا۔اس زمانے میں اسلامیہ کالج لاہور میں بہت سی علمی و ادبی شخصیات موجود تھیں، جنھوں نے میرزا ادیب کے ادبی ذوق کو پروان چڑھانے میں مدد کی۔میرزا ادیب نے شروع میں شعر و شاعری کی طرف توجہ دی،مگر جلد ہی اسے ترک کرکے افسانہ اور ڈرامہ نگاری کی طرف آگئے۔

1935ء میں انھوں نے رسالہ ”ادب لطیف“ کی ادارت سنبھال لی اور طویل عرصے تک اس سے وابستہ رہے۔پھر ریڈیو پاکستان میں ملازم ہو گئے۔میرزا ادیب ریڈیائی ڈرامہ نگاری میں اہم مقام رکھتے تھے۔

(جاری ہے)

وہ معاشرے کے مسائل سمجھتے تھے،اس لئے ان کے ڈرامے عام موضوعات اور روز مرہ زندگی کے واقعات سے متعلق ہیں۔

اپنے معاشرے کی انسانی خواہشات اور توقعات کو میرزا ادیب نے خاص اہمیت دی۔
میرزا ادیب نے کردار نگاری کے سلسلے میں بھی گہرا مشاہدہ کیا۔انھوں نے زندگی کے عام کرداروں کو ڈرامائی کرداروں کا درجہ دیا۔ان کے مکالمے نہایت برجستہ اور مختصر ہوتے تھے۔
یہی وجہ ہے کہ ان کے ڈراموں میں قاری یا ناظر کی دلچسپی شروع سے آخر تک قائم رہتی ہے،جو کسی بھی کامیاب ڈرامہ نگار کی سب سے بڑی خصوصیت ہے۔ان کے ڈراموں کے مجموعوں کے نام یہ ہیں:
آنسو اور ستارے،لہو اور قالین،ستون،فصیل شب،خاک نشین،پس پردہ اور شیشے کی دیوار وغیرہ۔ان کے علاوہ ”صحرا نورد کے خطوط،صحرا نورد کے رومان اور مٹی کا دیا“ان کی زندہ رہنے والی کتابیں ہیں۔انھوں نے 31 جولائی 1999ء کو وفات پائی۔

مزید سو بڑے لوگ

Hazrat Ameer E Muaawiya RTA

حضرت امیر معاویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ

Hazrat Ameer E Muaawiya RTA

Sultan Muhammad Fateh

سلطان محمد فاتح

Sultan Muhammad Fateh

Dante

دانتے

Dante

Albert Einstein

البرٹ آئن سٹائن

Albert Einstein

Michael Faraday

مائیکل فیریڈے

Michael Faraday

Mustafa Kamaal

مصطفیٰ کمال

Mustafa Kamaal

Suqrat

سقراط

Suqrat

Aurangzeb Alamgir

اورنگ زیب عالمگیر

Aurangzeb Alamgir

Syed Ahmad Khan

سید احمد خاں

Syed Ahmad Khan

Nero

نیرو

Nero

Nikolai Lenin

نکولائی لینن

Nikolai Lenin

Hazrat Khalid Bin Waleed RTA

حضرت خالد بن ولید رضی اللہ تعالیٰ عنہ

Hazrat Khalid Bin Waleed RTA

Your Thoughts and Comments