Quaid E Azam - Joke No. 475

قائداعظم - لطیفہ نمبر 475

قائداعظم کو بچوں سے بہت محبت تھی اور وہ ان کی معصوم خواہشات کا بہت خیال رکھتے تھے۔ ایک بار جب وہ طلبہ سے خطاب کرنے کے لئے آئے تو ان سے آٹو گراف لینے والوں کا ہجوم جمع ہو گیا ہر کوئی دستخط کے لئے قائداعظم کے سامنے خوبصورت آٹو گراف بک پیش کر رہا تھا۔ ایک لڑکا ایسا تھا جس کے پاس کوئی آٹو گراف بک نہ تھی مگر اسے قائداعظم سے آٹو گراف حاصل کرنے کا بہت شوق تھا اس نے ڈرتے ڈرتے ایک سادہ کاغذ ان کے سامنے کر دیا قائداعظم بچے کو دیکھ کر مسکرائے اور جلدی سے کاغذ لے کر اس پر دستخط کر دیے اور یہ کہتے ہوئے کاغذ بچے کو تھما دیا ”بیٹا! تم تو گاندھی سے بھی برے نکلے‘ وہ آج تک مجھ سے سادہ کاغذ پر دستخط حاصل نہیں کر سکا“َ

مزید لطیفے

چوری

chori

شاعر

Shayar

سوئی دھاگہ

Sui dhaga

چیری بلاسم

cherry blossom

سپاہی

Sipahi

پہل

pehal

جج ملزم سے

Judge mulzim se

ایک دوست دوسرے سے

Aik dost doosre dost se

آبشار

aabshaar

استاد شاگرد سے

Ustad Shagird se

عصمت چغتائی

ismat chughtai

ساہیوال

Sahiwal

Your Thoughts and Comments