Mori Se Nikla Ek Saanp - Puzzle No. 729

موری سے نکلا اک سانپ

mori se nikla ek saanp

مزید پہیلیاں

بے شک دن بھر پیتے جائیں

Beshak Din Bhar Peety Jaye

جس نے بھی وہ ساز بجایا

Jis Nay Bhi Woh Saaz Bajaya

وہ رہتی ہے گھر میں اکیلی کھڑی

Wo Rehti Hai Ghar Me Akeli Khadi

اک جتھے کا وہ سردار

Aik Juthy Ka Wo Sardar

دہلی پہنچے ڈھاکہ پنچے جا پہنچے قندھار

Delhi Punche Dhaka Punche Ja Punche Qandhar

دیکھے سارے ایک جگہ پر

Dekhy Sary Aik Jaga Per

ہاتھ میں‌ اس کے ہیں ہتھیار

Hath Me Uske He Hathiyar

باتوں باتوں میں‌ وہ کھایا

Bato Bato Mein Woh Khaya

ہم نے اگلا اس نے کھایا

Hum Ne Ugla Usne Khaya

ایک گھڑی قدرت نے بنائی

Aik Ghari Qudrat Ny Banai

سر پہ نور کے تاج سجائے

Sar Pe Noor Ke Taaj Sajaye

لکھنے کا ہے ڈھنگ نرالا

Likhne Ka Hai Dhang Nirala

Your Thoughts and Comments