وزیراعظم شاہد خاقان ، نواز ، شہباز ، سعد رفیق سمیت 16اراکین اسمبلی کے عدلیہ مخالف بیانات کیخلاف درخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ

جمعہ جنوری 23:05

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 جنوری2018ء) لاہور ہائیکورٹ نے وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی، سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف ، وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف،وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق سمیت 16اراکین اسمبلی کے عدلیہ مخالف بیانات کے خلاف دائر درخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے کیس کی سماعت شروع کی تو درخواست گزار آمنہ ملک کے وکیل اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ نواز شریف سمیت 16اراکین پارلیمنٹ نے پانامہ کیس کے فیصلے کے حوالے سے عدلیہ مخالف بیان بازی کی جو کہ وا ضح طور پر توہین عدالت ہے ،سپیکر قومی و صوبائی اسمبلی (ن) لیگ سے تعلق رکھتے ہیں اسی لئے عدلیہ مخالف بیان بازی پر ان کے خلاف کاروائی نہیں کر رہے۔

استدعا ہے کہ معزز عدالت اپنا اختیار استعمال کرتے ہوئے پیمرا کو عدلیہ مخالف تقاریر کو میڈیا پر نشر کرنے سے روکنے اور مذکورہ اراکین اسمبلی کے خلاف کارروائی کا حکم دے۔دوران سماعت سرکاری وکیل نے کہا کہ لاہورہائیکورٹ میں براہ راست اس قسم کی درخواست قابل سماعت نہیں ہے،محض الزامات کی بنیاد پر درخواست پر سماعت ممکن نہیں۔ جس پر فاضل عدالت نے درخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا۔

Your Thoughts and Comments