بو ایشیائی فورم کا ابتدائی ہدف ایشیائی ممالک کا اتحاد ،خود انحصاری اور ایشیا کے اثرات کو بڑھانا ہے،چینی صدر

فورم کا قیام اور ترقی چین کی اصلاحات اور کھلے پن سے قریبی منسلک ہے، چین کھلے ماحول میں ترقی کو فروغ دے گا ، چین کثیرالجہتی کی پور حمایت اور کثیرالطرفہ تجارتی نظام کا تحفظ کرتا ہے ْچینی صدر شی جن پنگ کی بو ایشیائی فورم کونسل کے سربراہ بانکی مون سے ملاقات میں گفتگو

بدھ مئی 16:20

بیجنگ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 مئی2018ء) چینی صدر شی جن پنگ نے کہا ہے کہ چین کھلے ماحول میں ترقی کو فروغ دے گا ، بو ایشیائی فورم کا ابتدائی ہدف ایشیائی ممالک کا اتحاد ،خود انحصاری اور ایشیا کے اثرات کو بڑھانا ہے،فورم کا قیام اور ترقی چین کی اصلاحات اور کھلے پن سے قریبی منسلک ہے، چین کثیرالجہتی کی پور حمایت اور کثیرالطرفہ تجارتی نظام کا تحفظ کرتا ہے۔

چائنہ ریڈیو انٹرنیشنل کے مطابق چینی صدر شی جن پنگ نے بیجنگ میں بو ایشیائی فورم کی کونسل کے سربراہ بانکی مون سے ملاقات کی۔ اس موقع پر شی جن پنگ نے کہا کہ بو آو ایشیائی فورم اس صدی کے آغاز میں قائم ہوا ہے جس کا ابتدائی ہدف ہی ایشیائی ممالک کا اتحاد ،خود انحصاری اور ایشیا کے اثرات کو بڑھانا ہے۔فورم کا قیام اور ترقی چین کی اصلاحات اور کھلے پن سے قریبی منسلک ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے زور دیا کہ چین کھلے ماحول میں کھلے پن سے ہم آہنگ ہوگا اور ترقی کرے گا۔شی جن پنگ نے نشاندہی کی کہ معیشت کی عالمگیریت ایک ناقابل واپسی عمل ہے۔اس عمل میں درپیش مسائل کے سامنے کثیرالطرفہ صلاح و مشورہ ہی درست راستہ ہے۔ شی نے کہا کہ رواں سال بو آو ایشیائی فورم کے سالانہ اجلاس میں اعلان کردہ چین کے کھلے پن کے اقدامات کو جلد عمل میں لایا جائے گا جو ایشیا اور دنیا کے لیے ترقی کے مزید مواقع فراہم کریںگے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ چین کثیرالجہتی کی بھرپور حمایت کرتا ہے اور کثیرالطرفہ تجارتی نظام کا تحفظ کرتا ہے۔بان کی مون نے کہا کہ موجودہ صورتحال میں بو ایشیائی فورم کو عالمگیریت اور آزاد تجارت کا حامی ہونے کے ناطے واضع سگنل دکھانا چاہیئے اور دی بیلٹ اینڈ روڈ سے بھرپور استفادہ کرتے ہوئے ایشیا کے کھلے پن ، جدت کاری اور ترقی کو فروغ دینا چاہیئے۔

متعلقہ عنوان :