حماس کی غزہ کی پٹی پر پابندیوں کیخلاف احتجاجی مظاہروں پر وزیراعظم رامی الحمد اللہ کے متنازع بیان کی شدید الفاظ میں مذمت

رامی الحمد اللہ کا غرب اردن میں مظاہروں سے متعلق بیان غیر ذمہ دارانہ، گمراہ کن، کشیدگی کو ہوا دینے کا موجب ،حقائق کے برعکس ہے، ترجمان

بدھ جون 15:38

غزہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 جون2018ء) حماس نے فلسطین کے علاقے مقبوضہ مغربی کنارے میں ہزاروں افراد کے غزہ کی پٹی پر پابندیوں کیخلاف احتجاجی مظاہروں پر وزیراعظم رامی الحمد اللہ کے متنازع بیان کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔حماس ترجمان فوزی برھوم نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وزیراعظم الحمد اللہ کا غرب اردن میں مظاہروں سے متعلق بیان غیر ذمہ دارانہ، گمراہ کن، کشیدگی کو ہوا دینے کا موجب اور حقائق کے برعکس ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کی طرف سے غرب اردن میں غزہ کے عوام سے اظہار یکجہتی اور فلسطینی اتھارٹی سے غزہ پرعاید کردہ پابندیاں ختم کرنے کا مطالبے کو گمراہ کہنا حکومت کی مایوسی اور ناکامی کا برملا ثبوت ہے۔ وزیراعظم رامی الحمد اللہ غرب اردن میں غزہ کے عوام سے یکجہتی کے لیے ہونے والے مظاہروں کو گمراہ کن کہنے کے بجائے غزہ کے حوالے سے اپنی انتقامی پالیسی تبدیل کریں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ غزہ کی پٹی میں تمام تر مشکلات کے باوجود عوام نے صہیونی دشمن کی جارحیت کا پامردی کے ساتھ مقابلہ کرنے کا عزم کر رکھا ہے۔ دوسری جانب غرب اردن میں غزہ کے عوام سے اظہار یکجہتی کے لیے ہونے والے مظاہرے اس امر کا ثبوت ہے کہ فلسطینی قوم رام اللہ اتھارٹی کی غزہ کے محصورین کے خلاف انتقامی پالیسی کو مسترد کرچکی ہے۔فوزی برھوم نے کہاکہ فلسطینی اتھارٹی ملک میں قومی مفاہمت کا عمل معطل کرنے اور غزہ کے عوام کو مسائل سے دوچار کرنے کی ذمہ دار ہے۔ وزیراعظم غرب اردن میں غزہ کی حمایت میں مظاہروں کو گمراہ کن قرار دے کر حقائق سے چشم پوشی نہیں کرسکتے۔ انہیں غزہ کے عوام کے مسائل کو ہرصورت میں حل کرنا ہوگا۔

متعلقہ عنوان :