اسلام آباد ہائی کورٹ کا وزیر کیڈ کو 90روز میں گریڈ 1 تا15 کے ملازمین کو مستقل کرنے کیلئے کابینہ سے منظوری، سولہ سے اوپر کے پراجیکٹ ملازمین کے کیسز ایف پی ایس سی کو بھجوانے کا حکم

منگل جون 13:40

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 جون2018ء) اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی محکموں کے کنٹریکٹ و ڈیلی ویجزملازمین کی مستقلی کے معاملہ پر تفصیلی فیصلہ سناتے ہوئے وزیر کیڈ کو 90روز میں گریڈ 1-15 کے ملازمین کو مستقل کرنے کے لیے کابینہ سے منظوری لینے سمیت سولہ سے اوپر کے پراجیکٹ کے ملازمین کے کیسز ایف پی ایس سی کو بھجوانے کا حکم جاری کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی محکموں کے کنٹریکٹ و ڈیلی ویجزملازمین کی مستقلی کا معاملہ، ہائیکورٹ کا تفصیلی فیصلہ جاری،فیصلہ جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشمتل ڈویژن بینچ نے جاری کیا، اسلام آباد ہائیکورٹ نے کابینہ کمیٹی کے زریعے مستقل ملازمین کو پوسٹنگ آرڈر جاری کرنے کاحکم۔۔۔۔ تمام وزارتیں اور ڈویژن مستقل ملازمین کو 90روز میں جوائننگ آرڈر جاری کریں جب کہ ایسے ملازمین کی مستقلی ان کے نوٹیفکیشن \جوائننگ آرڈر کی تاریخ سے تصور ہوگی،فیصلے کے مطابق وزیر کیڈ 90روز میں گریڈ 1-15 کے ملازمین کو مستقل کرنے کے لیے کابینہ سے منظوری لیں، گریڈ سولہ سے اوپر کے پراجیکٹ کے ملازمین کے کیسز ایف پی ایس سی کو بھجوانے کا حکم جب کہ گریڈ1-15کے پراجیکٹ ملازمین کو چھ ماہ میں مستقل کرنے کا حکم، تفصیلی فیصلے مین یہ بھی کہا گیاکہ تمام ایڈہاک ملازمین کے کیسزایف پی ایس سی کو بھجے اور ایڈہاک ملازمین سے متعلق مستقلی کے لیے ایف پی ایس سی چھ ماہ میں ٹیسٹ ،انٹرویو یا براہ راست رائے دے، پراجیکٹ ختم ہونے کی صورت میں ملازمین مستقل نہیں ہوں گے،آئندہ ملازمتوں میں اضافی نمبر دیے جائیں گے ،جب کہ آئندہ عارضی تعیناتیاں کرنے سے بھی روک دیا گیا۔

(جاری ہے)

وفاقی حکومت کو پالیسی کی بجائے ملازمین مستقلی کے لیے صوبائی حکومتوں کی طرز پرقانون میں تبدیلی کرنے کا حکم بھی جاری۔

متعلقہ عنوان :