برلن کی ریاستی سینیٹ نے مالٹا کی سمندری حدود میں پھنسے مہاجرین کو پناہ دینے کی پیشکش کر دی

بدھ جون 00:50

برلن کی ریاستی سینیٹ نے مالٹا کی سمندری حدود میں پھنسے مہاجرین کو پناہ ..
برلن ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) برلن کی ریاستی سینیٹ نے مالٹا کی سمندری حدود میں پھنسے مہاجرین کو پناہ دینے کی پیشکش کر دی ہے۔ ساتھ ساتھ ریاستی سینیٹ نے ملک کی وفاقی حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ مہاجرین کے بحران اور ایسی صورتحال سے نمٹنے کے لیے یورپی سطح پر اس کا حل تلاش کرے۔

(جاری ہے)

جرمن نشریاتی ادارے کے مطابق برلن حکومت کی ترجمان کلاؤڈیا سووینڈر نے یہ اعلان گزشتہ روز منگل کو کیا اور یہ پیشکش بھی کی کہ کسی جامع سمجھوتے کے تحت مہاجرین کا بوجھ بانٹنے کے لیے وہ اور ان کی حکومت تیار ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ اس سلسلے میں وفاقی حکومت کی توثیق بھی لازمی ہے۔ واضح رہے کہ جرمن غیر سرکاری تنظیم لائف لائن کا ایک بحری جہاز اس وقت مالٹا کی سمندری حدود میں پھنسا ہوا ہے اور اس پر 234 مہاجرین سوار ہیں۔ اٹلی نے انہیں پناہ دینے سے انکار کر دیا ہے۔

متعلقہ عنوان :