عمرہ زائرین کو مکّہ، مدینہ اور جدہ کے علاوہ دیگر شہروں میں بھی جانے کی اجازت مِل گئی

سعودی کابینہ نے فیصلہ کیا ہے کہ عمرہ زائرین 3مخصوص شہروں کے علاوہ دیگر مقامات پر بھی آزادانہ طور پر سفر کر سکیں گے

Muhammad Irfan محمد عرفان بدھ جولائی 12:31

عمرہ زائرین کو مکّہ، مدینہ اور جدہ کے علاوہ دیگر شہروں میں بھی جانے ..
مکّہ مکرمہ(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 17جولائی 2019ء ) سعودی عرب میں حج سیزن کا آغاز ہو چکا ہے۔ اس سیزن کے آغاز پر سعودی کابینہ نے ایسا فیصلہ کیا ہے جس نے دُنیا بھر کے مسلمانوں کے دِل جیت لیے ہیں۔ سعودی کابینہ کے حالیہ فیصلے کے مطابق عمرہ پر آنے والوں کے لیے تین مخصوص شہروں کے علاوہ دیگر مقامات پر جانے کی پابندی ہٹا دی گئی ہے۔ سعودی کابینہ کا اجلاس سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی رہائش گاہ قصر السلام میں ہوا۔

جس کی صدارت شاہ سلمان نے کی۔ اس سے قبل عمرہ اور اور مسجد نبوی کی زیارت کے لیے آنے والوں کو صرف مکّہ، مدینہ اور جدہ میں قیام کی اجازت تھی۔ معتمرین ان کے علاوہ دیگر شہروں میں نہیں جا سکتے تھے۔ اگر کوئی اس پابندی کی خلاف ورزی کرتا تو اُس کے خلاف کارروائی کی جاتی اور قید کی سزا بھی بھُگتنا پڑتی۔

(جاری ہے)

واضح رہے کہ رواں سال کے عمرہ سیزن کے دوران اب تک 80 لاکھ افراد نے عمرہ کی سعادت حاصل کر لی ہے۔

اس وقت حج سیزن کی وجہ سے عمرہ کی سرگرمیاں معطل کر دی گئی ہیں۔ حج سیزن کے اختتام پر 15 اگست سے ایک بار پھر عمرہ سیزن کا آغاز ہو جائے گا۔ پاکستانیوں کی جانب سے عمرہ کے دوران دیگر شہروں میں جانے کی اجازت کو بہت بڑی خوش خبری قرار دیا گیا ہے۔ ماضی میں معتمرین کو جو ویزہ جاری کیا جاتا تھا، وہ صرف جدہ، مکّہ اور مدینہ کے شہروں کے لیے کارآمد ہوتا تھا۔ ان شہروں کے علاوہ اگر عازمین کسی اور شہر میں جانے کی کوشش کرتے تھے تو بھی اُن کی گرفتاری عمل میں آ جاتی تھی۔ گزشتہ برس بھی پاکستان سے آئے سینکڑوں معتمرین بغیر پرمٹ کے طائف شہر چلے گئے تھے جنہیں سیکیورٹی اہلکاروں نے گرفتار کر لیا تھا۔ بعد میں پاکستانی سفارت خانے کی کوششوں سے ان کی رہائی عمل میں آئی تھی۔