ایران نے جوہری معاہدے کی نئی امریکی و فرانسیسی تجویز مسترد کردی

ٹرمپ کوسیاست، قانون اور عالمی معاہدے کی سمجھ بوجھ نہیں،ایک تاجر اتنا بڑا فیصلہ کیسے کرسکتاہی حسن روحانی کا خطاب

جمعرات اپریل 14:47

تہران(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 اپریل2018ء) ایران کے صدر حسن روحانی نے امریکا اور فرانس کی جانب سے ایرانی جوہری منصوبے سے متعلق ایک نئے معاہدے کی تجویز کو قطعی مسترد کردیا۔میڈیارپورٹس کے مطابق ایرانی صدر حسن روحانی نے اپنی جارحانہ تقریر میں واضح کیا کہ ہمارے درمیان جے سی پی او اے معاہدہ ہوا، اگر وہ قائم ہے تو ٹھیک ورنہ کوئی نیا معاہدہ قبول نہیں کیا جا ئیگا۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہاکہ امریکی صدر کو سیاست، قانون اور عالمی معاہدے کی کوئی سمجھ بوجھ نہیں ہے، ایک تاجر، بزنس مین، بلڈر کیسے عالمی نوعیت کے اہم معاملوں پر فیصلہ کر سکتا ہی ۔واضح رہے فرانس نے اوباما انتظامیہ اور ایران کے درمیان جوہری معاہدہ کرانے کے لیے اہم کردار ادا کیا تھا، تاہم صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے 12 مئی کو اس معاہدے کے اختتام کی دھمکی کے بعد فرانس اس کو برقرار رکھنے کے لیے اقدامات کررہا ہے۔یاد رہے کہ امریکا اور ایران کے درمیان ہونے والے جوہری معاہدے میں ان دونوں ممالک کے ساتھ ساتھ برطانیہ،، فرانس،، جرمنی،، روس اور چین نے بھی بطور ضامن دستخط کیے تھے۔