حضرت امام حسین ؓ قیامت تک کے لیے حق اور یزید باطل قوتوں کا نمائندہ ہے‘ڈاکٹر طاہر القادری

حضرت امام حسین ؓ کی حکمرانی انسانیت کے دلوں پر ہے جو ظلم و جبرکے خلاف اٹھنے کا شعور دیتی ہے‘یوم عاشور پرسربراہ عوامی تحریک کا پیغام

جمعرات ستمبر 19:16

حضرت امام حسین ؓ قیامت تک کے لیے حق اور یزید باطل قوتوں کا نمائندہ ہے‘ڈاکٹر ..
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 ستمبر2018ء) پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ و تحریک منہاج القرآن کے بانی و سرپرست ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے یوم عاشور پراپنے پیغام میںکہا ہے کہ حضرت امام حسین ؓ قیامت تک کے لیے حق اور یزید باطل قوتوں کا نمائندہ ہے۔ جس کے دل میں رتی برابر بھی ایمان باقی ہے اسے یزید کے جھوٹے قاتل، اقتدار کے لالچی اور فاسق و فاجر ہونے پر شک نہیں ہو سکتا۔

اہل بیت اطہار کے مقدس خون کی سرخی کی وجہ سے آج دین محمدیؐ کی کرنیں اپنی تمام توانائیوں کے ساتھ دنیا کے کونے کونے کو روشن رکھے ہوئے ہے۔نواسہ رسول اور اہل بیت اطہار پر ظلم کرنے والے دنیا میں نشان عبرت بنے اور قیامت کے دن بھی ان کا ٹھکانہ جہنم اور دردناک عذاب ہے۔حضرت امام حسین ؓ کی حکمرانی انسانیت کے دلوں پر ہے جو ظلم و جبر اور آمریت کے خلاف اٹھنے کا شعور دیتی ہے۔

(جاری ہے)

ڈاکٹر طاہر القادری نے اپنے پیغام میں کہا کہ حضرت امام حسین ؓ کی جدوجہد کا مقصد مٹتی ہوئی دینی قدروں کو بچانا تھا ۔حضرت امام عالی مقام کی جدوجہد نے ثابت کر دیا کہ دین کا نظم سب سے بڑھ کر ہے ۔ اللہ کے راستے میں جانوں کے نذرانے دینے والے افضل ترین انسان ہیں۔ شہید کو جو مقام ومرتبہ اللہ نے دیا وہ کسی عابد و زاہد کو نہیں ملا۔ انہوں نے کہا کہ شہید کے ساتھ اللہ رب العزت نے 6وعدے فرمائے ہیں۔

(1)خون بہتے ہی شہید کی مغفرت کر دی جاتی ہے (2)شہید جنت میں اپنا ٹھکانہ دیکھ لیتا ہی(3)شہید کو عذاب قبر سے محفوظ رکھتاجاتا ہی(4)شہید قیامت کے خوف اور گھبراہٹ سے محفوظ رکھا جاتا ہی(5)شہیدکوایمان کا لباس پہنایا جاتاہی(6)شہید کو اپنے 70 افراد کی شفاعت کی اجازت ہوتی ہے۔یہ انعامات اور فضیلت ہر کلمہ گو مسلمان اور نبی آخر الزمانؐ پر ایمان رکھنے والے کیلئے ہے اوراگر شہیدنواسہ رسول ؐ ہوں اور خانوادہ رسولؐ میں سے ہوں تو پھر شہادت کی فضیلت اور فضائل کیا ہونگے یہ اللہ اور اس کے رسولؐ سے بہتر اور کوئی نہیں جان سکتا۔

انہوں نے کہا کہ حضرت امام حسین ؓ کو آقاعلیہ السلام نے اپنی مبارک زندگی میں ہی جنت میں نوجوانوں کا سردار قرار دیا گیا، اس کی اہمیت واقعہ کربلا سے سامنے آئی کہ انہیں کیوں جنتی نوجوانوں کا سردار قرار دیا گیا تھا، اہل بیت کی محبت جزو ایمان ہے۔حسنین کریمین سے محبت دراصل حضور اکرم ؐ سے محبت ہے۔اپنی زندگیاں ان مقدس ہستیوں کے نقش قدم پر گزاریں۔ انہوں نے کہا کہ دعا ہے اللہ تعالیٰ حضرت امام حسینؓ اور اہل بیت اطہار کے نقش قدم پر چلنے اور دین محمدی اور اپنے ایمان کی حفاظت کرنے کی توفیق عطا کرے۔