کر وشیا ،گھا نا اور سا ئپرس کے سفیروں کا ایف پی سی سی آئی کا دورہ

بدھ ستمبر 20:02

کر وشیا ،گھا نا اور سا ئپرس کے سفیروں کا ایف پی سی سی آئی کا دورہ
کراچی۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 18 ستمبر2019ء) پاکستان میں تعینات کروشیا، گھا نااور سا ئپرس کے سفیروں نے سرما یہ کا ری بورڈ حکومت سند ھ کی ٹیم کے ہمراہ ایف پی سی سی آئی کے ہیڈ آفس کراچی کادورہ کیا اور ایف پی سی سی آئی کے قا ئم مقام صدر ڈاکٹر مرزا اختیار بیگ، ایف پی سی سی آئی کے سابق صدر ایس ایم منیراور ایف پی سی سی آئی کے دیگر عہدیداران اور ممبرز سے ملاقا ت کی۔

سفارتکا روں کو خو ش آمدید کہتے ہو ئے ایف پی سی سی آئی کے قا ئم مقا م صدر ڈاکٹر مرزا اختیار بیگ نے ایف پی سی سی آئی کی ملکی اور غیر ملکی سر گر میوں پر بریفنگ دی ۔انہوں نے پاکستان کے کروشیا ، گھا نااور سا ئپر س کے ساتھ تجا رتی تعلقا ت پر رو شنی ڈالی اور ان ممالک کے ساتھ تجا رتی اور معاشی تعلقا ت کے فروغ کے لیے نئی منڈیو ں اور مواقعوں کی تلاش پر زور دیا ۔

(جاری ہے)

ڈاکٹر بیگ نے کروشیا ، گھا نااور سا ئپر س کے سفیروں کونو مبر میں ہو نے والی کراچی میں سر مایہ کاری کا نفر نس اور نما ئش پر مدعو کیاجو کہ اسلا مک چیمبرز کے بورڈ آف ڈائر یکٹر ز کی میٹنگ اور ECOچیمبر کی Statutoryمیٹنگ کے موقع پر منعقد کی جا ئے گی ۔ ڈاکٹر بیگ نے سفارتکا رو ں کو حکومت پاکستان کی جانب سے CPEC سے ملحقہ اسپیشل اکنا مک زونزZones سر مایہ کاری کے لیے دی جانے والی مراعات کے با رے میں بھی بتا یااورسیا حت ، کم لا گت گھروں، ITسے متعلق شعبو ں پرسرمایہ کاری کے پروجیکٹس کے معتلق بھی بتایا ۔

اس کے علاوہ انہو ں نے ان ممالک کے ساتھ ایف پی سی سی آئی کی جو ائنٹ بز نس قو نصل کو فعال کر نے کی خواہش کا بھی اظہار کیا۔ تینوں سفارتکاروں نے جواب میں کہاکہ پاکستان کے ساتھ با ہمی تعلقا ت اور تجا رتی سر گر میوں کو بڑھانے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ جن میں نجی شعبو ں کے تجا رتی وفود کا تبادلہ بھی شا مل ہیں ،سفارتکاروں نے اپنے ملک میں سر مایہ کاری کے ممکنہ شعبے ، سرما یہ کاری کی پا لیسیا ں اوراپنی مہارتو ں سے متعلق خاص طور جیسے کا ن کنی ،شپ یارڈ،فارماسو ٹیکل اور طبی شعبے سے شامل متعلق بھی ایف پی سی سی آئی کو آگا ہ کیا ہیں۔

کروشیا کے سفیر نے در خواست کی کہ ایف پی سی سی آئی پاکستان کی حکومت سے دو نو ں ملکو ں کے در میان ہو نے والی bilateral investment treaty and double taxation for meaningful investment relations.کے دستخط پر زور دیا تا کہ با ہمی سر مایہ کاری میںاضافہ ہو ۔ ایف پی سی سی آئی کے سابق صدر ایس ایم منیر نے اس بات کی بھی تجو یز دی کہ چیمبر آف کامرس اور انڈ سٹر کاروباری برادری کو قریب لا نے میں اپنا کردار ادا کرے جس سے معاشی تعلقا ت مزید مستحکم ہو ں گے۔

انہوںنے یہ بھی کہا کہ اپنے ملک کی برآمدات کو بڑھانے کے لیے ہمیں چا ہیے کہ ہم غیر روائتی مارکیٹس میں اپنی برآمدات کو بڑھائیں ۔اس میٹنگ میں ایف پی سی سی آئی کے نائب صدور ارشد جمال اور نور احمد خان بھی شامل تھے۔ اس کے علاوہ اس میٹنگ میں گھا نا کے سفارتخانے کے مشیر Daniel Abjapon، کروشیا سفارتخانے کے Ivor Condig Third Secretary ، سابق نائب صدر وسیم وہرا، محمد انور قریشی ، عمران بیگ، قبر ص کے قونصل جنرل کمال چنا ئے نے بھی شرکت کی۔