Do Dost - Joke No. 566

دو دوست - لطیفہ نمبر 566

دو دوست شیخیاں بگھار رہے تھے ایک بولا:”میں جنگل کے قریب ندی میں نہا رہا تھا کہ اچانک شیر آ گیا میری رائفل دور پڑی تھی اور مجھے تیرنا بھی نہیں آتا تھا اس لئے میں غوطہ بھی نہیں لگا سکتا تھا پھر بھی میں نے اپنے اوسان خطانہ ہونے دیے اور شیر کے منہ پر پانی کا چھینٹا اتنے زور سے مارا کہ وہ ڈر کر بھاگ گیا“۔ دوسرا دوست بولا:”یہ کب کا واقعہ ہے“۔ پہلا دوست:”گزشتہ اتوار کا“۔ پہلا دوست:”پھر تو تم درست کہتے ہو کیونکہ اسی دن ایک شیر میرے گھر آیا تھا میں نے اس کی مونچھوں کو ہاتھ لگا کر دیکھا تو وہ گیلی تھیں“۔

مزید لطیفے

سمندر میں طوفان

samandar mein toofan

باپ بیٹے سے

Baap bete se

کھانا

khana

شدید بارش

Shadeed Barish

دو چھڈو

do chadho

صبح

subah

قیمہ

Qeema

کرایہ دار

kirayedar

ایک دوست

Aik dost

ایک عورت اپنی پڑوسن سے

aik aurat apne parosan se

پیار ومحبت

pyar o mohabbat

قیمت

Qeemat

Your Thoughts and Comments