Do Dost - Joke No. 566

دو دوست - لطیفہ نمبر 566

دو دوست شیخیاں بگھار رہے تھے ایک بولا:”میں جنگل کے قریب ندی میں نہا رہا تھا کہ اچانک شیر آ گیا میری رائفل دور پڑی تھی اور مجھے تیرنا بھی نہیں آتا تھا اس لئے میں غوطہ بھی نہیں لگا سکتا تھا پھر بھی میں نے اپنے اوسان خطانہ ہونے دیے اور شیر کے منہ پر پانی کا چھینٹا اتنے زور سے مارا کہ وہ ڈر کر بھاگ گیا“۔ دوسرا دوست بولا:”یہ کب کا واقعہ ہے“۔ پہلا دوست:”گزشتہ اتوار کا“۔ پہلا دوست:”پھر تو تم درست کہتے ہو کیونکہ اسی دن ایک شیر میرے گھر آیا تھا میں نے اس کی مونچھوں کو ہاتھ لگا کر دیکھا تو وہ گیلی تھیں“۔

مزید لطیفے

ماں اور بیٹا

Maa Aur Beta

مالکن

Malkin

ایک سیلز مین

Aik salesman

کتے کی عزت

Kutte Ki izzat

کسی فقیر نے

Kisi faqeer nay

گروی

Girvi

اداکار

adakaar

پروفیسر

professor

امتحان ہال

imtihaan hall

مالک نوکر سے

malik nokar se

دودھ

Doodh

بھکاری

bhikari

Your Thoughts and Comments