Teen Buchai

تین بجے

رات کے تین بجے مزمل صاحب کے ہاں ٹیلی فون کی گھنٹی بجی اور بجتی ہی چلی گئی۔ آخر کار انہیں ریسیور اٹھنا پڑا دوسری طرف سے ایک غصیلی آواز سنائی دی۔ ”میں آپ کا پڑوسی مہربان علی بول رہا ہوں۔ آپ کا کتا آج شام سے بھونکے جا رہا ہے۔ اس منحوس کی وجہ سے میں آج رات ایک لمحے کے لئے نہیں سو سکا۔ اگر آپ نے اسے چپ نہیں کرایا تو میں آ کر اسے گولی مار دوں گا۔ دوسری رات عین اسی وقت مہربان علی کے گھر میں فون کی گھنٹی بجی اور بجتی ہی چلی گئی وہ بہت ہی گہری نیند سو رہے تھے۔ لیکن آخر کار انہیں ریسیور اٹھانا پڑا۔ دوسری طرف مزمل صاحب خوش گوار لہجے میں بولے۔ ”میں نے یہ بتانے کیلئے فون کیا ہے کہ میرے ہاں کوئی کتا نہیں ہے۔

Your Thoughts and Comments