لاہور ہائیکورٹ میں شہدا کے نام پر اراضی ایکوائر کرکے ہاؤسنگ سوسائٹی بنانے کے خلاف کیس میں ڈی ایچ اے سوسائٹی کو پلاٹوں کی فروخت سے روک دیا

جمعرات جون 21:30

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 21 جون2018ء) لاہور ہائیکورٹ میں شہدا کے نام پر اراضی ایکوائر کرکے ہاؤسنگ سوسائٹی بنانے کے خلاف کیس میں ڈی ایچ اے سوسائٹی کو پلاٹوں کی فروخت سے روک دیا۔جبکہ عدالت نے دونوں جانب سے دلائل مکمل ہونے کے بعد مرکزی پٹیشن پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس علی اکبر قریشی نے محمد رمضان کی درخواست پر سماعت کی۔

درخواست میں موقف اختیار کیاگیا تھا کہ گوجرنوالہ میں ڈی ایچ اے نے 60ایکر اراضی شہدا کے نام پر ایکوائر کی۔

(جاری ہے)

اور متاثرہ افراد کو سیکشن 17کیتحت ڈی سی ریٹ کے تحت ادائیگیاں کردیں جس کے بعد ڈی ایچ اے نے اراضی کو سوسائٹی میں شامل کرکے فرخت دیگر لوگوں کو بھی شروع کردی ڈی ایچ اے کے وکیل نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ الزامات بے بنیاد ہیں۔ ڈی ایچ شہدا کے لیے مختص کی گئی اراضی کو فروخت نہیں کیا جارہا ۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ آپ ریاست کی لینڈ کو کیسے شہریوں سے ایکوائر کرسکتے ہیں آپ نے شہدا کے نام پر سوسائٹی بنانے کے لیے سستی زمین حاصل کی اور اب اسے فروخت کررہے ہیں۔۔عدالت نے مرکزی پٹیشن پر مقدمہ کا فیصلہ محفوظ کرلیا۔