’یو این‘ مندوب کا سلامتی کونسل میں بیان کھلم کھلا اسرائیل کی طرف داری ، فلسطینی قوم پر صہیونی مظالم کو نظرانداز کرنا ہے، حماس

ملادینوف کے موقف کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں، فلسطینی قوم، مسلم امہ کے بنیادی مسائل کو نظر انداز کیا گیا، ترجمان فوزی برہوم

پیر جون 17:34

غزہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 جون2018ء) حماس نے مشرق وسطیٰ کیلئے متعین اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی ’نیکولائی ملادینوف‘ کے سلامتی کونسل میں اجلاس سے خطاب کی شدید مذمت کرتے ہوئے ان پر غاصب صہیونی ریاست کی طرف داری کا الزام عائد کیا ہے۔اطلاعات کے مطابق حماس ترجمان فوزی برھوم نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’یو این‘ مندوب کا سلامتی کونسل میں بیان کھلم کھلا اسرائیل کی طرف داری اور فلسطینی قوم پر صہیونی مظالم کو نظرانداز کرنا ہے۔

(جاری ہے)

ترجمان نے کہا کہ اقوام متحدہ کے مندوب نے سلامتی کونسل میں غزہ کی پٹی کی خراب صورتحال کے حوالے سے جو موقف اختیار کیا ہے وہ اسرائیل کے سرکاری موقف سے ہم آہنگی رکھتا ہے جب کہ حقیقت کا اس سے کوئی تعلق نہیں۔ انہوں نے نہ صرف فلسطینی قوم بلکہ مسلم امہ کے بنیادی مسائل کو نظرانداز کیا ہے۔ترجمان نے اقوام متحدہ کے امن مندوب سے اپنا موقف تبدیل کرنے اور حقائق کے مطابق بات کرنے کا مطالبہ کیا۔ ترجمان نے کہا کہ غزہ کی پٹی کے عوام پر صہیونی ریاست نے بدترین پابندیاں عائد کر رکھی ہیں۔ عالمی امن مندوب کو صہیونی ریاست کی پابندیاں کیوں دکھائی نہیں دیتیں اور وہ غزہ کی ابتر صورت حال کا ذمہ دار حماس اور دوسری تنظیموں کو کیوں قرار دیتے ہیں۔

متعلقہ عنوان :